Abid Sakina mar gayi
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Abid Sakina mar gayi
Bhayya ko doon gi kia jawab, Abid Sakina mar gayi

Ro kar dam e rukhsat yehi mujh se kaha tha bhai ne
Meri Sakina aaj se Zainab halaway hay teray
Bhayya ko doon gi kia jawab (x2) Abid Sakina mar gayi

Jee bhar ke baba ko yahan na ro Saqi e be watan
Baba hay ban may be kafan khud bhi sidhari be kafan
Har zakhm ka de kar hisab (x2) Abid Sakina mar gayi
Bhayya ko doon gi kia jawab, Abid Sakina mar gayi

Haey Hussaina ki sada zindan se ab na aayi gi
Zindan ki tareekh may ye baat likhi jaye gi
Zalim ko kar ke be naqab (x2) Abid Sakina mar gayi
Bhayya ko doon gi kia jawab, Abid Sakina mar gayi

Baqir kaheen mehw e buka Kulsoom hay noha kuna
Yun to sabhi hain dil figar Fizza ho ya Akbar ki maa
Behosh hay Umme Rabab (x2) Abid Sakina mar gayi

Dagh e yatemi kia mila ansoo muqaddar ban gaye
Bachchi ke marnay ka sabab yadon ke lashkar ban gaye
Had se barrha jab izterab (x2) Abid Sakina mar gayi
Bhayya ko doon gi kia jawab, Abid Sakina mar gayi

زنداں میں جب کہ دخترَ شبیرؑ مر گئی
دنیا ہے دفعتاً سفرِ خلد کر گئی
کنبے کے دل پہ داغ جدائی کا دھر گئی
غل پڑ گیا حسینؑ کی عاشق گزر گئی

جنت بسائی چھوڑ کے دنیا کے باغ کو
تازہ کیا ہے پھر علی اصغرؑ کے داغ کو

ایذا سے غم سے درد اٹھانے سے چھٹ گئی
کنبے سے کیا کہ سارے زمانے سے چھٹ گئی
اچھا ہو کہ گھڑکیاں کھانے سے چھٹ گئی
صبح شام آنسو بہانے سے چھٹ گئی

نیند اڑ گئی لوگوں کی تو بچی کے بین سے
اب تو یزید رات کو سوئے گا چین سے

عابدؑ سكینہؑ مر گئی 
بھیا کو دوں گی کیا جواب ، عابدؑ سكینہؑ مر گئی 

رو کر دمِ رخصت یہی ، مجھ سے کہا تھا بھائی نے 
میری سكینہؑ آج سے ، زینبؑ حوالے ہے تیرے 
بھیا کو دوں گی کیا جواب (2) عابدؑ سكینہؑ مر گئی 

جی بھر كے بابا کو یہاں ، نہ رو سکی یہ بے وطن 
بابا ہے رن میں بے کفن ، خود بھی سدھاری بے کفن 
ہر زخم کا دے کر حساب (2) عابدؑ سكینہؑ مر گئی 
بھیا کو دوں گی کیا جواب ، عابدؑ سكینہؑ مر گئی 

ہائے حسینا کی صدا ، زندان سے اب نہ آئی گی 
زندان کی تاریخ میں ، یہ بات لکھی جائے گی 
ظالم کو کر كے بے نقاب (2) عابدؑ سكینہؑ مر گئی 
بھیا کو دوں گی کیا جواب ، عابدؑ سكینہؑ مر گئی 

باقرؑ کہیں محوِ بُکا ، كلثومؑ ہے نوحہ کُنا 
یوں تو سبھی ہیں دِل فگار ، فضّہؑ ہو یا اکبرؑ کی ماں 
بے ہوش ہے امِّ ربابؑ (2) عابدؑ سكینہؑ مر گئی 
بھیا کو دوں گی کیا جواب ، عابدؑ سكینہؑ مر گئی 

اِس کمسنی میں بے خطا ، کیا کیا مصائب سہہ گئی
درّے لگے گوہے چھنے ، پیدل چلی قیدی بنی
جب لا سکی نہ غم کی تاب (2) عابدؑ سکینہؑ مر گئی
بھیا کو دوں گی کیا جواب ، عابدؑ سكینہؑ مر گئی 

داغِ یتیمی کیا ملا ، آنسو مقدر بن گئے 
بچی كے مرنے کا سبب ، یادوں كے لشکر بن گئے 
حد سے بڑھا جب اضطراب (2) عابدؑ سكینہؑ مر گئی 
بھیا کو دوں گی کیا جواب ، عابدؑ سكینہؑ مر گئی 

کیسے بیاں کر پائیں گے ، عرفان و مظہر عابدی
کرتے ہوئے یہ مرثیہ ، غش کھا گئے بنتِ علیؑ
زنداں کا کر کے انتساب(2) عابدؑ سکینہؑ مر گئی