Jaan e Zehra ka matam hay kam na ho ga
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Jaan e Zehra ka matam hay kam na ho ga

Haey pardes may us ka cheda gala
Samnay maa ke veeran jhoola hua (x2)
Dafn kartay hi ye Shah e deen ne kaha
Pyasay Asghar ka matam hay matam
Pyasay Asghar ka matam hay (x2) kam na ho ga

Koi mehmaan par zulm dhata nahi
Koi ghurbat may hargiz satata nahi
Koi sajday may khanjar chalata nahi
Halq e Sarwar ka matam hay matam
Halq e Sarwar ka matam hay (x2) kam na ho ga

Khoon peeti raheen zulm ki barchiyan
Zakhm seenay pe khaye ga har naujawan
Kat ke bhi ye kahay gi hamari zubaan
Ali Akbar ka matam hay matam
Ali Akbar ka matam hay (x2) kam na ho ga

Khoon e Abid jahan may bahain gay ham
Karbala har jagha par banayain gay ham
Shamaa mazloomiat ki jalayain gay ham
Ye bahattar ka matam hay matam 
Ye bahattar ka matam hay (x2) kam na ho ga

Jang karnay ko Zainab ke do laadlay
Aaye maqtal se khoon may nahaye huay (x2)
Aon o Jafar ka matam hay kam na ho ga

Dasht may ik qayamat bapa ho gayi
Lash tukron may nohshah ki bat gayi (x2)
Jaan e Shabbar ka matam hay Kam na ho ga

Kar ke qabza tarae pe pyasa raha
Jo tha mashkeeza teeron se chalni hua
Dono baazo kata ke wo maara gaya
Us dilawar ka matam hay matam (x2)
Us dilawar ka matam hay kam na ho ga

Nojawan ke jigar par jo barchi lagi
Ran may pyaray Nabi ki nishani miti (x2)
Seena Akbar ka haey naizay ki ani
Ali Akbar ka matam hay kam na ho ga

Sheh ne bachay ko jalti zameen par rakha
Badlay pani ke sookha gala chid gaya (x2)
Choom ke nanhay Asghar ko Sheh ne kaha
Ali Asghar ka matam hay kam na ho ga

جان زہراؑ کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 
شیر و صفدر کا ماتم ہے کم نہ ہو گا

ہائے پردیس میں اُس کا چھیدا گلا
سامنے ماں كے ویران جھولا ہوا
دفن کرتے ہی یہ شاہِ دینؑ نے کہا
پیاسے اصغرؑ کا ماتم ہے ماتم
پیاسے اصغر کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 

کوئی مہمان پر ظلم ڈھاتا نہیں 
کوئی غربت میں ہرگز ستاتا نہیں 
کوئی سجدے میں خنجر چلاتا نہیں 
حلقِ سرورؑ کا ماتم ہے ماتم 
حلقِ سرورؑ کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 

خون پیتی رہیں ظلم کی برچھیاں 
زخم سینے پہ کھائے گا ہر نوجوان 
کٹ كے بھی یہ کہے گی ہماری زباں
علی اکبرؑ کا ماتم ہے ماتم 
علی اکبرؑ کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 

خونِ عابدؑ جہاں میں بہائیں گے ہم 
کربلا ہر جگہ پر بنائیں گے ہم 
شمع مظلومیت کی جلائیں گے ہم 
یہ بہتّر کا ماتم ہے ماتم 
یہ بہتّر کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 

جنگ کرنے کو زینبؑ كے دو لاڈلے
آئے مقتل سے خوں میں نہائے ہوئے
اپنے ماموں پہ قربان دونوں ہوئے
عونؑ و جعفرؑ کا ماتم ہے ماتم
عونؑ و جعفرؑ کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 

دشت میں اِک قیامت بَپا ہو گئی 
لاش ٹکڑوں میں نوشاہ کی بٹ گئی 
لاش دولھا کی گٹھڑی میں لائی گئی
جانِ شبرؑ کا ماتم ہے ماتم
جانِ شبرؑ کا ماتم ہے کم نہ ہو گا

کر كے قبضہ ترائی پہ پیاسا رہا
جو تھا مشکیزہ تیروں سے چھلنی ہُوا
دونوں بازو کئا کے وہ مارا گیا
اُس دلاور کا ماتم ہے ماتم
اُس دلاور کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 

نوجواں كے جگر پر جو برچھی لگی 
رن میں پیارے نبیؐ کی نشانی مِٹی
سینہ اکبرؑ کا ہئے نیزے کی انی
علی اکبرؑ کا ماتم ہے ماتم 
علی اکبرؑ کا ماتم ہے کم نہ ہو گا 

شہہ نے بچّے کو جلتی زمیں پر رکھا
بدلے پانی كے سوکھا گلا چِھد گیا
چُوم کے ننھے اصغرؑ کو شہہؑ نے کہا
علی اصغرؑ کا ماتم ہے ماتم
علی اصغرؑ کا ماتم ہے کم نہ ہو گا