Umme Laila ne kaha tashna dahan kuch to kaho
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Umme Laila ne kaha tashna dahan kuch to kaho
Meray Akbar meri jaan e chaman kuch to kaho

Maa teri chand si soorat pe ho wari Akbar
Mil gaye khaak may daulat meri saari Akbar 
Kyun nahi suntay ho faryad hamari Akbar
Kia abhi tak bhi hay seenay may chubhan kuch to kaho

Dekh to bali Sakina hay pareshan meray laal
Ghash ke aalam may parri hain phuphi amma meray laal
Ankhain to kholo tarrapti hay teri maa meray laal
Dekha tanha hain Shehanshah e zaman kuch to kaho

Bhai Sajjad hay beemar sambhalo Akbar
Shimr se bali Sakina ko bacha lo Akbar
Apnay Asghar ko to seenay se laga lo Akbar
Kya bandhay gi meray hathon may rasan kuch to kaho

Mera armaan tha sehra tera dekhon Akbar
Bas teray biyah ke armaan nikalon Akbar
Pehlay Sughra ko Madinay se bula loon Akbar
Phir barray shoq se laoon gi dulhan kuch to kaho

Sunti hoon Sughra ka khat aaya hay utho beta
Is ne jaldi tumhain bulwaya hay utho beta
Kurta teray liye bhijwaya hay utho beta
Dekho mar jaye gi beemar behan kuch to kaho

Teray seenay may jo barchi ka ye phal toota hay
Meri qismat meray khawaboon ka mehal toota hay
Teray baba pe ik koh e ajal toota hay
Itnay khamoosh hain kyun Shah e zaman kuch to kaho

Ab teray khoon ki mehndi may laga loon sar may
Phir isi haal se faryad karoon mehshar may
Phal teray seenay may hay zakhm dil e madar may
Kyun khizaan nazar hua mera chaman kuch to kaho

Lash e Akbar pe ye sar peet ke Zainab ne kaha
Meri khidmat ka mujhe khoob diya tum ne sila
May ne to Aon o Muhammad bhi kiyay tum pe fida
Phir bhi ujrra meray bhai ka chaman kuch to kaho

Dekh Irfaan qayamat hui majlis may bapa
Shaam se aati hay Zainab ke tarrapnay ki sada
Poori tanzeem e Hussaini hui masroof e buka
Shah ke laal ka zakhmi hay bada kuch to kaho

اُمِ لیلیٰ نے کہا تشنہ دہن کچھ تو کہو
میرے اکبر میری جانِ چمن کچھ تو کہو

ماں تیری چاند سی صورت پہ ہو واری اکبر
مل گئی خاک میں دولت میری ساری اکبر
کیوں نہیں سُنتے ہو فریاد ہماری اکبر
کیا ابھی تک بھی ہے سینے میں چُبھن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔۔

دیکھ تو بالی سکینہ ہے پریشان میرے لال
غش کے عالم میں پڑی ہے پھوپھی اماں میرے لال
آنکھیں تو کھولو تڑپتی ہے تیری ماں میرے لال
دیکھا تنہا ہے شہنشاہِ زمن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔۔

بھائی سجاد ہے بیمار سنبھالو اکبر
شمر سے بالی سکینہ کو بچا لو اکبر
اپنے اصغر کو توسینے سے لگا لو اکبر
کیا بندھے گی میرے ہاتھون میں رسن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔۔

میرا ارمان تھا سہر اتیرادیکھوں اکبر
بس تیرے بیاہ کے ارمان نکالوں اکبر
پہلے صغریٰ کو مدینے سے ُبلالوںاکبر
پھر بڑے شوق سے لائوںگی دلہن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔۔

سنتی ہوں صغرا کاخط آیا ہے اُٹھوبیٹا
اتنی جلدی تمہیں بُلوایا ہے اُٹھو بیٹا
کُرتا تیرے لئے بھجوایا ہے اُٹھو بیٹا
دیکھو مر جائے گی بیمار بہن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔۔

تیرے سینے میں جو برچھی کا یہ پھل ٹوٹا ہے
میری قسمت میرے خوابوں کا محل ٹوٹا ہے
تیرے بابا پہ تو اک کوہے اجل ٹوٹا ہے
اتنے خاموش ہیں کیوں شاہِ زمن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔۔

اب تیرے خون کی مہندی میں لگالوں سر میں
پھر اسی حال سے فریاد کروں محشر میں
پھل تیرے سینے میں ہے زخم دلِ مادر میں
کیوں خزاں نظر ہوا میرا چمن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔۔

دیکھ عرفان قیامت ہوئی مجلس میں بپا
شام سے آتی ہے زینب کے تڑپنے کی صدا
پوری تنظیمِ حسینی ہوئی مصروفِ بکا
شاہ کے لال کا زخمی ہے بدن، کچھ تو کہو
اُمِ ۔۔۔۔۔