Tashna lab mazloom Sarwar alwida
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



تشنہ لب مظلوم سرورؑ الوداع 
فاطمہ زہراؑ كے دلبر الوداع 

شان مجلس تھا تمہارا ذکرِ غم 
رونقِ مہراب و ممبر الوداع 

ہے جوانی بھی وبالِ زندگی 
اب تمہارے غم میں اکبرؑ الوداع 

لیجئے عونؑ و محمدؑ اب سلام 
صابرہ زینبؑ كے دلبر الوداع 

دِل سے اب نقشِ وفا مٹتا نہیں 
جاؤ عباسِؑ دلاور الوداع 

مجلسوں میں ہم کو روتا چھوڑ کر 
مسکراتے جاؤ اصغرؑ الوداع 

جان مادر اے حسن کے لاڈلے
جسم ہے پامال لشکر الوداع

اے پیاسی سکینہ جان شاہ دیں
لائے ہیں اشکوں کے ساغر الو داع

اب نہ زینبؑ جاؤ گی تم سر کھلے 
نذر ہے گریے کی چادر الوداع 

روتے ہیں باقر محبانِ حسین 
کہتے ہیں سبطِ پیمبرؑ الوداع

Tashna lab mazloom Sarwar alwida
Fatima Zehra ke dilbar alwida

Shan e majlis tha tumhara zikr e gham
Ronaq e mehrab o mimbar alwida

Hay jawani bhi wabal e zindagi
Ab tumharay gham may Akbar alwida

Lijiye Aon o Muhammad ab salam
Sabra Zainab ke dilbar alwida

Dil se ab naqsh e wafa mit-ta nahi
Jao Abbas e dilawar alwida

Majliso may ham ko rota chorr kar
Muskuratay jao Asghar alwida

Ab na Zainab jao gi tum sar khulay
Nazr hay ashkon ki chadar alwida

Rotay hain baqar muhibaan e Hussain
Kehtay hain sibt e payambar alwida