Allah janay kahan ho aey baba
Efforts: Mrs. Nighat Rizwan



Jab shaam ke zindaan may huwi, shaam haram ko. 
Ik aan na rahat thi na araam haram ko.
Har baar tapakta tha lahu, ashk rawaan se 
Zindaan larazta tha (x2) Sakina ki fughan se

Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Baba!! Kitni ratain guzar gaeyen baba
Allah jaane, kahan ho aey baba

Chote se sin may qaidiye zindaan hogayi (x3)
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Dil may jo mere dard hai khaliq ke hai aeyaan 
Kisko kahun may baap mere, baap hai kahaan
Tum bekafan may besaro samaan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Kya kya na khalq karne hakarat se behgaeyi 
Mei bekasi se dekhke muh sabka rehgaeyi
Kurta phata huwa meri pehchaan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Dar aah ki to shimr pukara khamosh ho 
Aur chup huwi to be padari ne kahan ke ro
In afato may girse pareshaan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Be jurm kaan zakhmi huwe aur tamache khaaeye 
Jo chaahe mujh falak ki sataaeyi ko phir sataaeye
Shehzaadi-e-Hussain ki ye shaan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Sadke gaeyi bataawo kahan hai mere padar 
Aaeye padar to jaaeye Sakina bhi apne ghar
kyun aise zalimon ki may mehman hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Poti hun uski jo ke hai kohnain ka ameer 
Jisne hazaro qaeyd se churwaaeye diyey aseer
Ummat nabi ki dekhke anjaan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Jab sarpe shah-e-deen ke Sakina ne phiri nazar 
Chillaaeyi roke haeye gazab mar gaeye padar
Baba ke sar ko dekhke haeyraan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Mu rakh ke mu pe shaah ko royi jo dil fighaar 
Sadma huwa nikaalne lagi tan se jaan-e-waar
Nanhi si jaan jaan se bejaan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Bas aey "Anees" bazm may hai giryaa-o-buka
Sadiyon talak rulaaeyenga sabko ye marsiya 
Bali Sakina qarb ka unhwaan hogayi
Baba may kyun na aap pe (x2) qurbaan hogayi
Allah jaane, kahan ho aey baba (x2)

Baba!! kitni rate guzar gaeyi baba
Allah jaane, kahan ho aey baba 

جب شام كے زندان میں ہوئی ، شام حرم کو
اِک آن نہ راحت تھی نہ آرام حرم کو
ہر بار ٹپکتا تھا لہو ، اشکِ رواں سے 
زندان لرزتا تھا ( 2 ) سكینہؑ کی فغاں سے 

اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

بابا ! ! کتنی راتیں گزر گئیں بابا 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا 

چھوٹے سے سِن میں قیدیءِ زندان ہوگئی
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

دِل میں جو میرے درد ہے خالق كے ہے عیاں
کس کو کہوں میں باپ میرا ، باپ ہے کہاں 
تم بے کفن میں بے سر و سامان ہوگئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

کیا کیا نہ خلق کلمے حقارت کے کہہ گئی
میں بے کسی سے دیکھ کے منہ سب کا رہ گئی
کرتا پھٹا ہُوا میری پہچان ہو گئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہو گئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا ( ز2 ) 

گر آہ کی تو شمر پکارا خاموش ہو 
اور چُپ ہوئی تو بے پدری نے کہا كہ رو 
ان آفتوں میںھ گرکے پریشان ہوگئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

بے جرم کان زخمی ہوئے اور تمانچے کھائے
جو چاہے مجھ فلک کی ستائی ہوئی کو پِھر ستائے 
شہزادیءِ حسینؑ کی یہ شان ہوگئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

صدقے گئی بتاؤ کہاں ہیں میرے پِدَر 
آئیں پِدر تو جائے سكینہؑ بھی اپنے گھر 
کیوں ایسے ظالموں کی میں مہمان ہوگئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

پوتی ہوں اُسکی جو كہ ہے کونین کا امیر 
جس نے ہزاروں قید سے چھڑوا دئے اسیر 
امت نبیؐ کی دیکھ کے انجان ہوگئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

جب سرپہ شاہِ دین كے سكینہؑ نے کی نظر 
چِلّائی رو کے ہائے غضب مر گئے پِدَر 
بابا كے سر کو دیکھ کے حیران ہوگئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

منہ رکھ كے منہ پہ شاہؑ کے روئی جو دِل فگار 
صدمہ ہُوا نکلنے لگی تن سے جانِ زار 
ننھی سی جان جان سے بے جان ہوگئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

بس اے انیس بزم میں ہے گریہ و بکا 
صدیوں تلک رلائے گا سب کو یہ مرثیہ
بالی سكینہؑ کرب کا عنوان ہو گئی 
بابا میں کیوں نہ آپ پہ ( 2 ) قربان ہوگئی 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا

بابا ! ! کتنی راتیں گزر گئیں بابا 
اللہ جانے ، کہاں ہو اے بابا