akbar jawan abhi tere marnay key din ne the
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



1. Akbar(as) haye Akbar(as) haye Akbar(as)
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay
Apne laho mai app sawarne ke din na thay (×2)
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay (x2)

2. Rukhta nahin hai seenay se jo khoon hai rawan
Aey lal yeh bata do ke kis jaa lagi sina
Apni reazaton ka khazeena to dekh loon (×2)
Akbar hatao hath mai sena tou dekh lon
Apne laho mai app sawarne ke din na thay
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay (x2)

3. Tum kiya giray ho maqtal me uth na saka Hussain(as)
Tum ko sina lagi hai or zakhmi hua Hussain(as)
Ankhein jo tum churate ho dil chortay hain hum (×2)
Tum hichkiyan jo laite ho dum tortay hein hum
Apne laho mai app sawarne ke din na thay
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay (x2)

4. Olaad pe jab ata hai atharwan baraas
Khushiyan samait lata hai atharwan baras
Dhulha say app lagtay thay har aik libas mein (×2)
Dil maa ka shad rehta tha sehra ki ass mein
Apne laho mai app sawarne ke din na thay
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay (x2)

5. Qasid khara hai pehlu mein aey lal dekh lo
Sughra(as) duayain daiti hai aameen tou kaho
Rakhta hoon khat ko lash pe dilbar jawab do (×2)
Sughra(as) salam kehti hai Akbar(as) jawab do
Apne laho mai app sawarne ke din na thay
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay (x2)

6. Aey Shaa-e-kibriya mujhe quwat ata karein
Lashe jawan uthaney ki himmat ata karein
Ankhon ka noor ley gaye noor-e-nazar ki lash (×2)
Khaibar ke dar se wazni hai mere pisar ki lash
Apne laho mai app sawarne ke din na thay
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay (x2)

7. Bas ae Raza kalam ko kardo yaha tamam
Mashgool-e-girya hogya majlis me khas o aam
Sadma badan ko akbar-e-zeeshan daitey hein (×2)
Subh-e-azan daitey thay abb jan deite hein
Apne laho mai app sawarne ke din na thay
Akbar(as) jawan abhi tere marne ke din na thay (x2)

اکبرؑ ہائے اکبرؑ ہائے اکبرؑ
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے
اپنے لہو میں آپ سنورنے كے دن نہ تھے
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے

رکتا نہیں ہے سینے سے جو خون ہے رواں
اے لال یہ بتا دو كے کس جا لگی سنا
اپنی ریاضتوں کا خزینہ تو دیکھ لوں
اکبرؑ ہٹاؤ ہاتھ میں سینہ تو دیکھ لوں
اپنے لہو میں آپ سنورنے كے دن نہ تھے
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے

تم کیا گرے ہو مقتل میں اٹھ نہ سکا حسینؑ
تم کو سنا لگی ہے اور زخمی ہوا حسینؑ
آنکھیں جو تم چراتے ہو دِل چھوڑتے ہیں ہم
تم ہچکیاں جو لیتے ہو دم توڑتے ہیں ہم
اپنے لہو میں آپ سنورنے كے دن نہ تھے
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے

اولاد پہ جب آتا ہے اٹھارواں برس
خوشیاں سمیٹ لاتا ہے اٹھارواں برس
دُولھا سے آپ لگتے تھے ہر اِک لباس میں
دِل ماں کا شاد رہتا تھا سہرے کی آس میں
اپنے لہو میں آپ سنورنے كے دن نہ تھے
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے

قاصد کھڑا ہے پہلو میں اے لال دیکھ لو
صغریٰؑ دعائیں دیتی ہے آمین تو کہو
رکھتا ہوں خط کو لاش پہ دلبر جواب دو
صغریٰؑ سلام کہتی ہے اکبرؑ جواب دو
اپنے لہو میں آپ سنورنے كے دن نہ تھے
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے

اے شیرِ کبریا مجھے قوت عطا کریں
لاشِ جواں اٹھانے کی ہمت عطا کریں
آنکھوں کا نور لے گئی نورِ نظر کی لاش
خیبر كے در سے وزنی ہے میرے پسر کی لاش
اپنے لہو میں آپ سنورنے كے دن نہ تھے
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے

بس اے رضا كلام کو کر دو یہاں تمام
مشغول گریہ ہو گئے مجلس میں خاص و عام
صدمہ پدر کو اکبرِؑ ذیشان دیتے ہیں
صُبحُ اذان دیتے تھے اب جان دیتے ہیں
اپنے لہو میں آپ سنورنے كے دن نہ تھے
اکبرؑ جوان ابھی تیرے مرنے كے دن نہ تھے