Do gharryon ki zindan may mehman Sakina hay
Efforts: Mrs. Nighat Rizwan



Do Gharriyon Ki Zindan Mein, Mehman Sakina Hai
Sajjad Chalai Aao, Perishaan Sakina Hai

1) Jaisa Mei Kehrahee Hoon, Waisa Hee Tum Karogai
   Kurte Mairay Mei Bhaiya, Mujhko Dafan Karogai
   Kuch Mangthee Hai Tumsai, Mehman Sakina Hai

2) Thora Sa Waqt Bhai, Moun Ronai Sai Nikalo
   Thairee Muntazir Hai Behna, Aa Ker Issay Sambhalo
   Kuch Dair Mei Daikhogai, Bai Jaan Sakina Hai

3) Mairai Goshwarai Bhaiya, Hain Shimr Nai Outharai
   Balon Sai Mujh Ko Pakra, Moun Per Tamachai Marai
   Samjha Na Thaharath Ka, Quran Sakina Hai

4) Kantay Nikalnai Ka, Itna Mujhai Sila Do
   Kuch Dair Kai Leeyai Hee, Baba Kai Sar Ko Laado
   Phelai Baithee Apna, Damaan Sakina Hai

5) Yaa aa raha hay mujh ko, basta hua Madina
   Bistar tha mera bhayya, apnay padar ka seena
   Zindan may to ghurbat ka saman Sakina hay

6) Sab qaidiyon ke bhayya, dukh dard ho batatay
   Apni behan se laikin, milnay nahi ho aatay
   Is baat se zindan may, hairan Sakina hay

7) Tauqeer Matami Kioun, Duniya Mei Dukh Uthay
   Ghairon Kai Dar Pai Jaa Kai, Kioun Jholiyan Phelaye
   Us Kay Mouamlon Ki, Nigraan Sakina Hai

دو گھڑیوں کی زنداں میں ، مہمان سكینہؑ ہے 
سجادؑ چلے آؤ ،پریشان سكینہؑ ہے 

جیسا میں کہہ رہی ہوں ، ویسا ہی تم کرو گے
کرتے میرے میں بھیا ، مجھکو دفن کرو گے
کچھ مانگتی ہے تم سے ، پیمان سكینہؑ ہے 

تھوڑا سا وقت بھائی ، خوں رونے سے نکالو 
تیری منتظر ہے بہنا ، آ کر اِسے سنبھالو
کچھ دیر میں دیکھو گے ، بے جان سكینہؑ ہے 

میرے گوشوارے عابدؑ ، ہیں شمر نے اتارے 
بالوں سے مجھ کو پکڑا ، منہ پر تمانچے مارے
سمجھا نہ طہارت کا ، قرآن سكینہؑ ہے 

یاد آ رہا ہے مجھ کو، بستا ہو مدینہ
پستر  تھا میرا بھیا، اپنے پدر کا سینہ
زنداں میں تو غربت کا، سامان سکینہؑ ہے

کانٹے نکالنے کا ، اتنا مجھے صلہ دو 
کچھ دیر کے لئے ہی ، بابا کے سَر کو لا دو 
پھیلائے بیٹھی اپنا ، دامان سكینہؑ ہے

سب قیدیوں کے بھیا، دکھ درد ہو بٹاتے
اپنی بہن سے لیکن، ملنے نہیں ہو آتے
اِس بات سے زنداں میں، حیران سکینہؑ ہے

توقیر ماتمی کیوں ، دُنیا میں دکھ اُٹھے 
غیروں کے دَر پہ جا کے ، کیوں جھولیاں پھیلائے 
اس کے معاملوں کی ، نگران سكینہؑ ہے