Haey Sughra(a.s.) bata kia likhoon
Efforts: Nishat Naqvi



Maula maqtal may sar ko jhukaaye
Laash-e-Akbar pe tanha khare hai
Dheeme dheeme tapakte hai aansu
Haey Sughra ka khat parh rahe hai
Bole kya may jawaab is ka doon (x2)

Haey Sughra bata kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x5)

1) May to pardes may lut gaya
Apne lashkar ko may ro chuka
Tera baba ghareeb hogaya (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

2) Aandhiya mera ghar legayi
Mere lakht-e-jigar legayi
Mera noor-e-nazar legayi (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

3) Khat tera ab sunaawu kise
Kon meri sada par uthe
Shab ko jaage huwe sogaye (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

4) Haey Sughra wo bhai tera
Jisne tujh se tha wada kiya
Kha gayi usko karbobala (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

5) Pyaar tune tha jisko likha
Ghutinyo bhi jo na chal saka
Haan wo Asghar bhi ab na raha (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

6) Shab ko dulha banaya jisse
Raas aayi na mehendhi jisse
Royi sehre ki lariyaan jisse (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

7) Ab Sakina ka hafiz khuda
Waqt Zainab pe bhi hai khara
Mujh ko ghere huwe hai qaza (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

8) Ye to accha huwa laadli
Apne ghar may tu rehgayi
Beridaayi se to bachgayi (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

9) Khat wo "Rehan-o-Sarwar" tha kya
Khaak se mera maula utha
Laash-e-Akbar pe khat rakhdiya (x2)
Haey iske siwa kya likhoon
Haey Sughra bata kya likhoon (x2)

مولا مقتل میں سَر کو جھکائے
لاشِ اکبرؑ پہ تنہا کھڑے ہیں
دھیمے دھیمے ٹپکتے ہیں آنسو
ہائے صغراؑ کا خط پڑھ رہے ہیں
بولے کیا میں جواب اِس کا دوں

ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

میں تو پردیس میں لُٹ گیا
اپنے لشکر کو میں رو چکا
تیرا بابا غریب ہو گیا
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

آندھیاں میرا گھر لے کئیں
میرے لخت جگر لے کئیں
میرا نور نظر لے کئیں
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

خط تیرا اب سناؤں کسے
کون میری صدا پر اٹھے
شب کو جاگے ہوئے سُو گئے
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

ہے صغراؑ وہ بھائی تیرا
جس نے تجھ سے تھا وعدہ کیا
کھا گئی اسکو کربوبالا
ہے اس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

پیار تو نے تھا جس کو لکھا
گھٹنیوں بھی جو نہ چل سکا
ہاں وہ اصغرؑ بھی اب نہ رہا
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

شب کو دولہا بنایا جسے
راس آئی نہ مہندی جسے
روئی سہرے کی لڑیاں جسے
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

اب سكینہؑ کا حافظ خدا
وقت زینبؑ پہ بھی ہے کڑا
مجھ کو گھیرے ہوئے ہے قضا
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

یہ تو اچھا ہُوا لاڈلی
اپنے گھر میں تو رہ ہی گئی
بے ردائی سے تُو بچ گئی
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہائے صغراؑ بتا کیا لکھوں

خط وہ ریحان و سرور تھا کیا
خاک سے میرا مولاؑ اٹھا
لاشِ اکبرؑ پہ خط رکھ دیا
ہائے اِس کے سوا کیا لکھوں
ہے صغراؑ بتا کیا لکھوں