Zindan ke andhery may sehmi hui masooma
Efforts: Mrs. Nighat Rizwan



زنداں کے اندھیرے میں  سہمی ہوئی معصومہؑ  ہائے اشک بہاتی ہے
تنہائی کے عالم میں   اک خوف زدہ بچی   بابا کو بلاتی ہے

خود سے ہی وہ کرتی ہے   باتیں علی اصغرؑ کی
اک لوری مچلتی ہے   جب جھولے کی ماٹی پہ   تصویر بناتی ہے

دیکھا ہے سکینہؑ نے  کوئی خواب ڈراؤنا سا
بکھری ہوئی لاشوں میں   لاشہ علی اصغرؑ کا   یہ ڈھونڈنے جاتی ہے

زنجیر علی عابدؑ کے جب دھوپ سے جلتے ہیں
معصومہؑ کے پینے کو   ہائے ملتا تھا جو پانی   کڑیوں پہ گراتی ہے

زنداں سے سکینہؑ کی  آواز نہیں آتی
دیکھو اے لعل میرے   رو رو کے دکھی زینب ؑ   عابدؑ کو بتاتی ہے

کیا ظلم کیا ہوگا   ملعون شمر تو نے
تجھے دیکھ کے مظلومہ ؑ  ہائے کانپتے ہاتھوں سے   کانوں کو چھپاتی ہے

نیزے پہ بھی غازیؑ کے   نیچے ہے نظر اختر
غیور کو سر ننگے   اغیار کے مجمعے میں   زینبؑ نظر آتی ہے