Kehti thi yeh Zainab aey Aun o Muhammad
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



کہتی تھی یہ زینبؑ یوں ماں کا مان نبھانا
اے عونؑ و محمدؑ اے عونؑ و محمدؑ
شبیرؑ کا تم صدقہ ہو اب خیمے میں بیٹا
تم لوٹ کر نہ آنا اے عونؑ و محمدؑ

ہے ماں کو یقین تم ماں کی بات رکھوگے
یہ یاد رہے خیموں میں ہیں پیاسے بچے
دریا پہ اگر جانا ہو سہہ روز کے پیاسو
تم پیاس نہ بجھانا اے عونؑ و محمدؑ
اے عونؑ ومحمدؑ۔۔۔

ہر حال میں تم پر لازم ہے شکر خدا کا
اے شہزادوں ہے صبر تمہارا ورثہ
فرزند ہو تم زینبؑ کے شکوہ نہیں کرنا
جب زخم کوئی کھانا اے عونؑ و محمد
اے عونؑ ومحمدؑ۔۔۔

کب ہم پہ ستم کر نے کے لئے آئے ہیں
یہ بدرواُحد کے بدلے کے لئے آئے ہیں
لازم ہے رجز سے پہلے میدان میں تم پر
مدحِ علیؑ سنانا اے عونؑ و محمدؑ
اے عونؑ ومحمدؑ۔۔۔

جب سانس تمہاری بچوں ہو اُکھڑنے والی
اُسوقت سرہانے آئیں گی مادر میری
دل کی یہ میری خواہش ہے اُس دم میری ماں سے
زخموں کو تم چھپانا اے عونؑ و محمدؑ
اے عونؑ ومحمدؑ۔۔۔

قاتل پہ کرم نانا کی طرح کردینا
یوں لاج میرے بھائی کے نام کی رکھنا
جو واسطہ دے بھائی کا میدان میں اُس پر
تم تیغ نہ چلانا اے عونؑ و محمدؑ
اے عونؑ ومحمدؑ۔۔۔

جب لاشے اُٹھا کرخیمے میں لائیں سرورؑ
زینبؑ یہ بولی اشکوں کو اپنے چھپا کر
میں بھی نہ تمہیں روؤنگی اور میرے لئے بھی
آنسو نہ تم بہانا اے عونؑ و محمدؑ
اے عونؑ ومحمدؑ۔۔۔

تعظیم کی خاطر کیوں اُٹھتے نہیں اب بیٹا
دیکھو تو سرہانے آئے ہیں میرے بھیا
جاگو میرے شہزادو! کیا بھول گئے ہو
قدموں پہ سر جھکانا اے عونؑ و محمدؑ
اے عونؑ ومحمدؑ۔۔۔

شاباش میرے بچوں ہوں میں اب تم سے راضی
یہ کہہ کہ تکلّم خاموش ہوئی شہزادی
نیزوں پہ سفر اب کر کے ہمراہ ہمارے
تم کو ہے شام جانا اے عون و محمد
اے عون ومحمد۔۔

Kehti thi ye Zainab yun maa ka maan nibhana
Aey Aon-o-Muhammad aey Aon-o-Muhammad

Shabbir ka tum sadqa ho ab qaime may beta
Tum laut kar na aana aey Aon-o-Muhammad

Hai maa ko yaqeen tum maa ki baat rakhoge
Ye yaad rahe qaimo may hai pyase bache
Darya pe agar jaana ho seh roz ke pyaso
Tum pyas na bujhana aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad

Har haal may tum par laazim hai shukr khuda ka
Aey shehzado hai sabr tumhara virsa
Farzand ho tum zainab ke shikwa nahi karna
Jab zakhm koi khana aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad

Kab humpe sitam karne ke liye aaye hai
Yeh badro ohad ke badle ke liye aaye hai
Laazim hai razaz se pehle maidan may tum par
Madhe ali sunana aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad

Jab saans tumhari bachon ho ukharne wali
Us waqt sirhane aayengi madar meri
Dil ki ye mere khwahish hai us dam meri maa se
Zakhmon ko tum chupana  aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad

Qhaatil pe karam nana ki tarha kar dena
Yun laaj mere bhai ke naam ki rakhna
Jo waasta de bhai ka maidan pe us par
Tum taygh na chalana  aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad

Jab laashe uthaakar qaime may laaye sarwar
Zainab ye boli askhon ko apne chupakar
Mai bhi na tumhe ro-ungi aur mere liye bhi
Aansu na tum bahana  aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad

Taazeem ki khaatir kyun ut-thay nahi ab beta
Dekho to sirhane aaye hai mere bhaiya
Jaago mere shehzado kya bhoolgaye ho
Qadmo pe sar jhukana aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad

Shabash mere bachon hoo mai tumse raazi
Yeh kehke takallum khamosh huvi shahzadi
Naizo pe safar karke hamraah hamaare
Tumko hai shaam jaana aey Aon-o-Muhammad
Aey Aon-o-Muhammad aey Aun-o-Muhammad