Jal chuke khaimay sheh e deen ke fiza khamosh hay
Efforts: Mrs. Nighat Rizwan

jal chuke qaime shahe deen ke fiza khamosh hai
bhooka ek aalam hai dashte nainawa khamosh hai
jal chuke qaime....

mai ye hayrat hoo zamana kis khadar hai sang dil
sun raha hai karbala ka waqaya khamosh hai
jal chuke qaime....

ghash hai bemaar lab ko taake goyaai kahan
chin rahi hai sar se zainab ke rida khamosh hai
jal chuke qaime....

ya ilaahi kaunsi quwat dile zainab may hai
deke bachon ko shahadat ki duwa khamosh hai
jal chuke qaime....

har khadam par hai jo bhai ki wasiyat ka khayaal
taaziyane khaake binte murtaza khamosh hai
jal chuke qaime....

khoon may doobi huwi hai sibte paighambar ki laash
kashti-e-ummat bachakar ta khuda khamosh hai
jal chuke qaime....

kya karay kis dil se de shabbir marne ki raza
sar jhukaye saamne bhai khada khamosh hai
jal chuke qaime....

aa rahi hai al-atash ki qaimaye sheh se sada
sar kataye ghaat par saqqa pada khamosh hai
jal chuke qaime....

maine jab poocha bata kya hai wafa ki imtehaan
keh ke ya abbas tareekh-e-wafa khamosh hai
jal chuke qaime....

جل چُکے خیمے شہِ دیںؑ کے فِضا خاموش ہے
ہُوکا ایک عالم ہے دشتِ نینوا خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

محوِ حیرت ہوں زمانہ کس قدر ہے سنگدل
سُن رہا ہے کربلا کا واقعہ خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

غش میں ہے بیمار لب کو تابِ گویائی کہاں
چِھن رہی ہے سر سے زینبؑ کے ردا خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

یا الٰہی کون سی قوت دلِ زینبؑ میں ہے
دے کے بچوں کو شہادت کی دُعا خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

ہر قدم پر ہے جو بھائی کی وصیت کا خیال
تازیانے کھا کہ بنتِ مُرتضٰیؑ خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

رو تو لے کھل کر ذرا اکبرؑ کو ماں ہٹ جائیے
شاہِ دیں پاسِ ادب سے مامتا خاموش ہے
جل چکے خیمے ۔۔۔۔۔

خون میں ڈوبی ہوئی ہے سبطِ پیغمبرؑ کی لاش
کشتیئِ اُمت بچا کر نا خُدا خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

کیا کرے کس دل سے دے شبیرؑ مرنے کی رضا
سر جُھکائے سامنے بھائی کھڑا خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

آ رہی ہے العتش کی خیمہءِ شِہہؑ سے صدا
سر کٹائے گھاٹ پر سقا پڑا خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔۔۔۔

میں نے جب پوچھا بتا کیا ہے وفا کی انتہا
کہہ کہ یا عباسؑ تاریخِ وفا خاموش ہے
جل چُکے خیمے ۔۔