Aey sham e gharibaan tareekh ka hay gham se teray
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Aey shame ghariban, ay shame ghariban
Tareekh ka hai gham se tere chaak gareban

Ek zakhme sina se ali akbar gaye maare
Kausar ko sidhare
Kya kya na thay laila ko abhi byaah ke armaan
Aey shame ghariban....

Cheh maah ke baysheer bhi maare gaye pyase
Ek teere khaza se
Is zulm pa khud ahle jafa hogaye girya
Aey shame ghariban....

Bete thay wo zainab ke ajab faqre abujad
Wo auno mohamed
Hamsheer ne dono ko kiya bhai pa qurbaan
Aey shame ghariban....

Akbar hai na qasim hai na asghar hai na abbas
Ab koi nahi paas
Ek pehr may shabbir ka ghar hogaya veeran
Aey shame ghariban....

Shehzadi sakina bhi aaghaze safar hai
Lagte hai tamachay
Aur sham ka zindan to hai pir sham ka zindan
Aey shame ghariban....

اے شام غریباں اے شام غریباں
تاریخ کا ہے غم سے تیرا چاک گریباں

اِک زخم سناں سے علی اکبرؑ گئے مارے
کوثر کو سدھارے
کیا کیا نہ تھے لیلیٰ کو ابھی بیاہ کے ارماں
اے شام غریباں

چھ ماہ کے بے شیر بھی مارے گئے پیاسے
اِک تیر فضا سے
اس ظلم پہ خود اہل جفا ہو گئے گریاں
اے شام غریباں

بیٹے تھے وہ زینبؑ کے عجب فرق ابوجد
وہ عونؑ و محمدؑ
ہمشیر نے دونوں کو کیا بھائی پہ قرباں
اے شام غریباں

اکبرؑ ہیں نہ قاسمؑ ہیں نہ اصغرؑ ہیں نہ عباسؑ
اب کوئی ہیں پاس
اک پہر میں شبیرؑ کا گھر ہو گیا ویراں
اے شام غریباں

شہزادی سکینہؑ ابھی آغاز سفر ہے
لگتے ہیں طمانچے
اور شام کا زنداں تو ہے پھر شام کا زنداں
اے شام غریباں