Aakhri raat Sakina ki
Efforts: Nishat Naqvi



Akhri raat sakina ki (x2)
Haay haey haey (x3)

Me khaak pa sojaungi (x2) haan kehti hu baba
Sine pe sulane ko kaha kehti hu baba (x2)

1) Kehti hu ke chehra hi dikhajayiye baba
Marne se pehle hi aajayiye baba
Pehlu me chupane ko kaha keti hu baba
Me khaak pa sojaungi ha kehti hu baba
Sine pe sulane ko kaha kehti hu baba (x2)

2) Baba mere bachpan ka takaza tho nahi tha
Khabo me khilone the janaza tho nahi tha
Godi me khilaa ne ko kaha kehti hu baba
Me khaak pa sojaungi ha kehti hu baba
Sine pe sulane ko kaha kehti hu baba (x2)

3) Baba mere zakhmon ki dawa kon karega
Ab jaan sakina ko bhala kon kahega
Pehlu me chupane ko kaha kehti hu baba
Me khaak pa sojaungi ha kehti hu baba
Sine pe sulane ko kaha kehti hu baba (x2)

4) Zindaan ki andheron me sula kyun nahi dete
Baba mujhe marne ki dua kyun nahi dete
Me lori sunaneko kaha kehti hu baba
Me khaak pa sojaungi ha kehti hu baba
Sine pe sulane ko kaha kehti hu baba (x2)

5) Marjawu agar baba tera shaam ho aanaa
Bimaar akela hai janaze ko uthana
Godi me uthana ko kaha kehti hu baba
Me khaak pa sojaungi ha kehti hu baba
Sine pe sulane ko kaha kehti hu baba (x2)

6) Koi bhi nahi aansu mere ponchne wala
Sarpe nahi hathon ko koi pherne wala
Bahon me chupane ko kaha kehti hu baba
Me khaak pa sojaungi ha kehti hu baba
Sine pe sulane ko kaha kehti hu baba (x2)

7) "Arman" sakina ki yahi bayn the haaye
Me kehti rahi baba magar aap na aye
Turbat bhi banana ko kaha kehti hu baba
Me khaak pa sojaungi ha kehti hu baba
Baba ko rone wali , Sine pe sonewali
Sakina guzar gaye (x3)

آخری رات سکینہؑ کی
ہائے ہائے ہائے

میں خاک پہ سوجائونگی ہاں کہتی ہوں بابا
سینے پہ سلانے کو کہاں کہتی ہوں بابا

کہتی ہوں کے چہرہ ہی دکھا جائیے بابا
مرنے سے پہلے ہی آجایئے بابا
پہلو میں چھپانے کو کہاں کہتی ہوں بابا

بابا میرے بچپن کا تقاضہ تو نہیں تھا
خوابوں میں کھلونے تھے جنازہ تو نہیں تھا
گودی میں کھلانے کو کہاں کہتی ہوں بابا

بابا میرے زخموں کی دوا کون کریگا
اب جان سکینہؑ کو بھلا کون کہے گا
پہلو میں چھپانے کو کہاں کہتی ہوں بابا

زنداں کے اندھیروں میں سلا کیوں نہیں دیتے
بابا مجھے مرنے کی دوا کیوں نہیں دیتے
میں لوری سنانے کو کہاں کہتی ہوں بابا

مر جائوں اگر بابا تیرا شام ہو آنا
بیمار اکیلا ہے جنازے کو اٹھانا
گودی میں اٹھانے کو کہاں کہتی ہوں بابا

کوئی بھی نہیں آنسو میرے پونچھنے والا
سر پہ نہیں ہاتھوں کو کوئی پھیرنے والا
بانہوں میں چھپانے کو کہاں کہتی ہوں بابا

ارمان سکینہؑ کے یہی بین تھے ہائے
میں کہتی رہی بابا مگر آپ نہ آئے
تربت میں بنانے کو کہا کہتی ہو بابا

بابا کو رونے والی
سینے پہ سونے والی
سکینہؑ گزر گئی