As Salamun alaik ya ghareeb Hussaina ( Ver 2)
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



As Salamun alaik ya ghareeb Hussaina

Tha yehi ran may Ghazi ka Noha
Be dast ho kar girta hoon maula
Yeh dard mujh ko marnay na de ga
Takti hay rasta bali Sakina
Aao madad ko aey ibn-e-Zehra

Zainab ne us ko nazon se pala
Us ne jo khaya seenay pe naiza
Jalti zameen par gir ke pukara
Zakhm e jigar ko maa se chupana
Aao mad ko aey ibn-e-Zehra

Haey haey woh Asghar cheh mah wala
Ghutno ke bal bhi jo chal na paya
Us ka badan jo naizay pe dekha
Baba ke sir se boli Sakina
Aao madad ko aey ibn-e-Zehra

May binte Zehra tum ibn-e-Zehra
Bhai behan ka yeh hay naseeba
Tum be kafan ho may be rida thi
Kaisa ghamo ne ham to hay ghera
Tum bhi nahi ho Ghazi nahi hay
Aao madad ko aey ibn-e-Zehra

Rehan o Kashif dasht e bala may
Majlis bapa thi sari fiza may
zakir thi Zainab bhai ki apnay
masroof sab thay aah o buka may
Aao madad ko aey ibn-e-Zehra

السلامُ علیک یا غریب حسینا

تھا یہی رن میں غازیؑ کا نوحہ
بے دست ہو کر گرتا ہوں مولاؑ
یہ درد مجھ کو مرنے نہ دے گا
نکتی ہے رستہ بالی سکینہؑ
آؤ مدد کو اے ابنؐ زہراؑ

زینبؑ نے اُس کو نازوں سے پالا
اُس نے جو کھایا سینے پہ نیزہ
جلتی زمیں پر گر کے پکارا
زخمِ جگر کو ماں سے چھپانا
آؤ مدد کو اے ابنؐ زہراؑ

ہئے ہئے وہ اصغرؑ چھ ماہ والا
گھٹنوں کے بل بھی جو چلنے نہ پایا
اُس کا بدن جو نیزے پہ دیکھا
بابا کے سر سے بولی سکینہؑ
آؤ مدد کو اے ابنؐ زہراؑ

بھائی بہن کا یہ ہے نصیبہ
تم بے کفن ہو میں بےردا ہوں
کیسا غموں نے ہم کو ہے گھیرا
تم بھی نہیں ہو غازی نہیں ہے
آؤ مدد کو اے ابنؐ زہراؑ

ریحان و کاشف دشتِ بلا میں
مجلس بپا تھی ساری فضا میں
ذاکر تھی زینبؑ بھائی کی اپنے
مصروف سب تھے آہ و بُکا میں
آؤ مدد کو اے ابنؐ زہراؑ