As Salamun alaik ya ghareeb Hussaina
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



As Salamun alaik ya ghareeb Hussaina

Zindan se chut ke Maa jaye aayi
Kab se ho sotay Uth jao bhai
Chehlum manaoo Turbat banaoon 
Farshe Aza pe ansoo bahaoon
Qasr e yazeedi khutbon se dha ke
Milnay ko tum se Aayi hay behna

Tum se bichar ke dar dar phiri hoon
Ik ik qadam par roti rahi hoon
Bazar dekha darbar dekha
Marti rahi hoon jeeti rahi hoon
Abid ne bhayya touq e giraan ka
May ne rasan ka pehna hay gehna

Paigham tera le kar gaye thi
Har ik museebat may seh rahi thi
Kanton pe bhayya paidal chali thi
Durre lagay thay so na saki thi
Aayi na bhayya sath hamaray
Ziandan se chut ke bali Sakina

Dekha to ho ga naizay se tum ne
Jo dukh uthay rahon may ham ne
Oonton pe baandha ham ko rulaya
Dar dar phiraya ahle sitam ne
Khaye hain pathar ansoo piye hain
Pairahan gham ka ham ne tha pehna

Tum bin watan may ja na sakoon gi
Poochay gi Sughra kia may kahoon gi
Akbar nahi hay Qasim nahi hay
Asghar nahi hay kaisay jiyon gi
Tum bhi nahi ho Ghazi nahi hay
Meray liye to mushkil hay jeena

May binte Zehra tum ibn-e-Zehra
Bhai behan ka yeh hay naseeba
Tum be kafan ho may be rida thi
Kaisa ghamo ne ham to hay ghera
May ja rahi hoon qabr e nabi par
Mujh ko bata do jo kuch hay kehna

Rehan o Kashif dasht e bala may
Majlis bapa thi sari fiza may
zakir thi Zainab bhai ki apnay
masroof sab thay aah o buka may
tarpay thay lashy ho kar wida jab
Zainab chali thi sooey Madina

السلامُ علیکَ یا غریب حُسیناؑ

زنداں سے چھٹ كے ماں جائے آئی
کب سے ہو سوتے اٹھ جاؤ بھائی
چہلم مناوؑں تربت بناؤں 
فرشِ عزا پہ آنسو بھاؤن 
قصرِ یزیدی خطبوں سے ڈھا كے 
ملنے کو تم سے آئی ہے بہنا 

تم سے بچھڑ كے در در پھری ہوں 
اک اک قدم پر روتی رہی ہوں 
بازار دیکھا دربار دیکھا 
مرتی رہی ہوں جیتی رہی ہوں 
عابدؑ نے بھیا طوق گراں کا 
میں نے رسن کا پہنا ہے گہنا 

پیغام تیرا لے کر گئی تھی 
ہر اک مصیبت میں سہہ رہی تھی 
کانٹوں پہ بھیا پیدل چلی تھی 
درّے لگے تھے سو نہ سکی تھی 
آئی نہ بھیا ساتھ ہمارے 
زنداں سے چھٹ كے بالی سكینہؑ 

دیکھا تو ہو گا نیزے سے تم نے 
جو دکھ اُٹھائے راہوں میں ہم نے 
اونٹوں پہ باندھا ہم کو رلایا 
دَر دَر پھرایا اہلِ ستم نے 
کھائے ہیں پتھر آنسو پئے ہیں 
پیراہن غم کا ہم نے تھا پہنا 

تم بن وطن میں جا نہ سکون گی 
پوچھے گی صغراؑ کیا میں کہوں گی 
اکبرؑ نہیں ہے قاسمؑ نہیں ہے 
اصغرؑ نہیں ہے کیسے جیوں گی 
تم بھی نہیں ہو غازیؑ نہیں ہے 
میرے لئے تو مشکل ہے جینا 

میں بنتِ زہراؑ تم اِبْن زہراؑ
بھائی بہن کا یہ ہے نصیبا 
تم بے کفن ہو میں بے ردا تھی 
کیسا غموں نے ہم کو ہے گھیرا 
میں جا رہی ہوں قبرِ نبیؐ پر 
مجھ کو بتا دو جو کچھ ہے کہنا 

ریحان و کاشف دشت بلا میں
مجلس بپا تھی ساری فضا میں
ذاكر تھی زینب بھائی کی اپنے 
مصروف سب تھے آہ و بکا مئى 
تڑپے تھے لاشے ہو کر ودا جب 
زینبؑ چلی تھی سوئے مدینہ