Aey meray baba jaan
Efforts: Nishat Naqvi



Us waqt jabke zainab darbar me gayi thi,
qari namaaziyo se mehfil saji huwi thi,
Zalim ye puchhta tha ghazi tera kaha hai,
balo se mu chupaye zainab ye keh rahi thi
Aey mere babajaan horahi hay azaan sar chupaou kaha (x2)

Majmaye aam me bewatan be amaan agaya karvaan
Aey mere babajaan horahi hay azaan sar chupaou kaha (x2)

1) Mei bhi hu marziay binte kayrun nisa, mere lehje me hay baba teri ada
Naam zainab mera, tune jo rakhdiya, dey di apni zubaan
Aey mere babajaan horahi hay azaan sar chupaou kaha (x2)

2) Babajaan me rida mangti rehgayi,bamo dar saj gaye, jiteji margayi,halqaye
shaam me, naam sunkar mera, margaya naatawan
Aey mere babajaan horahi hay azaan sar chupaou kaha (x2)

3) Babajaan ye tera akhri tha bayan, teri chadar bachayega ghazi jawaan,
mar gaya bawafa, chingayi hay rida, kehti hay bibiyaa
Abbas, Abbas Abbas x3

4) Ruk na paya mere bawafa ka wo sar, noke neza se aane laga khaak par, behn ko
darbadar, dekhkar nange sar, sheh na paya jawaan
Aey mere babajaan horahi hay azaan sar chupaou kaha (x2)

5) Haath kano pe hai, neel gaalo pe hai,aur nishan jo sakina ke shaano pe hai,
har nishan se yahi, aa rahi hay sada, babajaan babajaan
Aey mere babajaan horahi hay azaan sar chupaou kaha (x2)

6) Aysa khutba diya mene darbar me, likhraha hay jo "yawar" tere pyaar me,
lehjaye hayderi, har azaan ke liye hay sadaye azaan
Aey mere babajaan horahi hay azaan sar chupaou kaha (x2)

اس وقت جب کہ زینبؑ دربار میں گئ تھی
قاری نمازیوں سے محفل سجی ہوئی تھی
ظالم یہ پوچھتا تھا غازیؑ تیرا کہاں ہے
بالوں سے منہ چھپاۓ زینبؑ یہ کہہ رہیں تھی

اے میرے بابا جان
ہورہی ہے اذاں سر چھپاؤں کہاں

مجمع عام میں
بے وطن بے اماں
آگیا کارواں

میں بھی ہوں مرضیہ بنت خیرالنساء
میرے لہجے میں ہے بابا تیری ادا
نام زینبؑ میرا
تونے جو رکھ دیا
دے دے اپنی زباں

اے میرے بابا جان ہورہی ہے اذاں سر چھپاؤں کہاں

بابا جاں میں ردا مانگتی رہ گئ
بام و در سج گۓ جیتے جی مرگئی
بلوئہِ عام میں
نام سن کر میرا
مرگیا ناتواں

اے میرے بابا جان ہورہی ہے اذاں سر چھپاؤں کہاں

بابا جاں یہ تیرا آخری تھا بیاں
تیری چادر بچا لے گا غازیؑ جواں
مرگيا باوفا
چھن گئ ہے ردا
کہتی ہیں بی بیاں

عباسؑ عباسؑ عباسؑ عباسؑ
عباسؑ عباسؑ عباسؑ عباسؑ
عباسؑ عباسؑ عباسؑ عباسؑ
عباسؑ عباسؑ عباسؑ عباسؑ

رک نہ پایا میرے باوفا کا وہ سر
نوکِ نیزہ سے آنے لگا خاک پر
بہن کو در بدر
دیکھ کر ننگے سر
سہہ نہ پایا جواں

اے میرے بابا جان ہورہی ہے اذاں سر چھپاؤں کہاں

ہاتھ کانوں پہ ہیں نیل گالوں پہ ہے
اور نشاں جو سکینہ کے شانوں پہ ہے
ہر نشاں سے یہی
آرہی ہے صدا
بابا جاں بابا جاں

اے میرے بابا جان ہورہی ہے اذاں سر چھپاؤں کہاں

شام عاشور سے شام و کوفہ تلک
میں نے مانگا نہیں ہے خراج فدک
میری چادر سے ہے میری ماں کا سکوں
سن لے ظالم جہاں

کل تھی ماں آج میں بھی ہوں دربار میں
مثل زہراؑ کھڑی ہوں میں اغیار میں
اس طرف ہیں شقی اس طرف رہ گئ
بے پدر بیٹیاں

ایسا خطبہ دیا میں نے دربار میں
لکھ رہا ہے جو یاور تیرے پیار میں
لہجہ حیدری
ہر عزا کے لیے
ہے صداۓ اذاں

اے میرے بابا جان ہورہی ہے اذاں سر چھپاؤں کہاں