Man mata ala hubbe aal e Muhammad mata shaheeda
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



جو بغضِ آلِ محمدؑ میں مر گیا شوکت
کوئی بھی دور ہو بس وہ یزید ہوتا ہے
لبوں پر نادِ علیؑ اور ہاتھ سینے پر
جو اِس طرح سے گیا وہ شہید ہوتا ہے

من ماتَ علٰیٰ حبِّ آلِ محمدؑ ماتَ شہیدا
اعلان کر دو دنیا میں ساری
سب کو بتا دو اپنا عقیدہ

اپنی سواری اُنکا سفینہ
جو حکمِِ رب سے نوحؑ نے بنایا
جن پر نگاہیں ہیں پنجتن کی
خوں سے جسے ہم نے ہے سجایا

گر برق کڑکے طوفان برسے
یا پھر یزیدی ہذیان برسے
سب کچھ مٹے گا ماتم رہے گا
سُن لے زمانہ اپنا یہ دعویٰ

ماتم کریں گے ماتم کریں گے
ہر دم کریں گے پہلے سے زیادہ
روزِ جزا بھی ماتم کریں گے
بی بی ہمارا تم سے ہے وعدہ

سرورؑ کی مجلس گھر کھر میں ہو گی
دنیا میں ہو گی محشر میں ہو گی
یہ فرشِ مجلس یہ بزمِ ماتم
ہے معجزہ زہـــراؑ کی دعا کا

تم ظلم کر لو، تم جبر کر لو
ہم سب کو چاہے، تم قتل کر دو
قائم رہے گی محفل عزا کی
اجرِ رسالت کا ہے تقاضا

رضواں لکھیں گے ناصر پڑھیں گے
ہم شہہؑ کا ماتم مل کر کریں گے
اہلِ عزا بھی سب یہ کہیں گے
ماہِ محرم ہے ماہِ گریہ

jo bughz e Aal e Mohammed mai margaya shaukat
Koi bhi daur ho bas woh yazeed hota hai
Laboon pay naad e Ali aur hath seenay par
Jo is tarah say gaya woh shaheed hota hai

Man mata ala hubbe aale Muhammad mata shaheeda
Ailan kar do dunya may sari
Sab ko bata do apna aqeeda

Apni sawari un ka safeena
Jo hukm-e-Rab se Nooh ne banaya
Jin par nigahain hain Panjtan ki
Khun se jisay ham ne hay sajaya

Gar barq karrkay toofan barsay
Ya phir yazeedi hizyan barsay
Sab kuch mitay ga matam rahay ga
Sun le zamana apna hay dawa

Matam karain gay matam karain gay
Har dam karian gay pehlay se ziada
Roz-e-jaza bhi matam karain gay
Bibi hamara tujh se hay wada