Aey kash may bhi hota maidan e Karbala may
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Aye kash main bhi hota maidan e Karbala may
Aye kaash, ae kaash, ae kaash
Aye kaash me bhi hota maidany Karbala may

Mera bhi zikar ata Quraan e Karbala may


Zahra k ladley py jaan apni waar deta
Tableegh-e-Mustafa ka qarza utaar deta
Hur ki tarha se me bhi aada se jang kar ke
Insaniyat ka chehra khoon se nikhaar deta

Sheh ki taraf jo barrhta wo haath kaat deta
Maidan-e-jang sara lashon se paat deta
Juz maut aur kaheen bhi jaaye amaan na milti
Dil zindagi se sab ka aisa uchaat deta

Nasl e yazeediat ko aisa sabaq sekhata
Naam o nasab bhi apna har fard bhool jata
Sufiyaniyat ki aisi mitti kharaab hoti
Ta hashar phir na koi Namrood sar uthata

Mola ba jabr e qismat dil me rahi ye hasrat
Hasil hoyi na mujko sarmaya e shahadat
Ashk e aza ki barish karti rahain gi ankhain
Seena zani karon ga is gham me ta qiamat

Mera salaam un per jo tashna lab rakhe hain
Be jurm Karbala me jin k galay kate hain
Ghorron se rond daalay aada ne jin ki lashay
Tapti hoi zameen per jo be kafan parray hain

Wo shaam e gham, wo khaimay, wo raat, wo fizayain
Bachon ki sehmi sehmi wo muztarib sadayain
Aulaad-e-fatima par kya kya sitam na toote
Syedaniyo k sar se cheeni gayen ridayain

Jab ran se arahi thi awaaz e istighasa
Pur dard kis qadar tha andaaz e istighasa
Shayad na tha jahan me koi siwaye Asghar
Hota jo rahe haq me imdaad e istighasa

Her bazm her zabaan per hain karbala k charchay
Ta hasher kam na hoongy aal e iba k charchay
Abbas e bafawaa se daad e wafa jo milti
Hotay gali gali me meri wafa k charchay

اے کاش میں بھی ہوتا میدان کربلا میں
اے کاش ، اے کاش ، اے کاش اے
کاش میں بھی ہوتا مایدانی کربلا میں

میرا بھی ذکر عطا قرآن کربلا میں


زہراؑ کے لاڈلے پہ جاں اپنی وار دیتا
تبلیغِ مصطفیؐ کا قرضہ اُتار دیتا
حُر کی طرح سے میں بھی اعداء سے جنگ کر كے
انسانیت کا چہرہ خوں سے نکھار دیتا

شہہؑ کی طرف جو بڑھتا وہ ہاتھ کاٹ دیتا
میدان جنگ سارا لاشوں سے پاٹ دیتا
جز موت اور کہیں بھی جائے امان نہ ملتی
دِل زندگی سے سب کا ایسا اُچاٹ دیتا

نسل یزیدیت کو ایسا سبق سکھاتا
نام و نسب بھی اپنا ہر فرد بھول جاتا
سفیانیت کی ایسی مٹی خراب ہوتی
تا حشر پِھر نہ کوئی نمرود سر اٹھاتا

مولاؑ با جبرِ قسمت دِل میں رہی یہ حسرت
حاصل ہوئی نہ مجھ کو سرمایہءِ شہادت
اشکِ عزا کی بارش کرتی رہیں گیں آنکھیں
سینہ زنی کروں گا اِس غم میں تا قیامت

میرا سلام ان پر جو تشنہ لب رکھے ہیں
بے جرم کربلا میں جن کے گلے کٹے ہیں
گھوڑوں سے روند ڈالے اعداء نے جن کے لاشے
تپتی ہوئی زمیں پر جو بے کفن پڑے ہیں

وہ شامِ غم ، وہ خیمے ، وہ رات ، وہ فضائیں
بچوں کی سہمی سہمی وہ مضطرب صدائیں
اولادِ فاطمہؑ پر کیا کیا ستم نہ ٹوٹے
سیدانیوں کے سر سے چینی گئی ردائیں

جب رن سے آرہی تھی آوازِ استغاثہ
پُر درد کس قدر تھا اندازِ استغاثہ
شاید نہ تھا جہاں میں کوئی سوائے اصغرؑ
ہوتا جو راہِ حق میں امدادِ استغاثہ

ہر بزم ہر زباں پر ہیں کربلا کے چرچے
تا حشر کم نہ ہوں گے آلِ عباءؑ کے چرچے
عباسِؑ با وفا سے دادِ وفا جو ملتی
ہوتے گلی گلی میں میری وفا کے چرچے