Aey sham e gharibaan mujhe kuch haal suna day
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



اے شام غریباں مجھے کچھ حال سنا دے
کوفے میں اسیروں پہ جو گزری ہے بتادے

آ مجھ کو بتا کیا ہوا دریا کے کنارے
مقتل سے کہاں پر گئے زینبؑ کے دلارے
اب کیا ہوئے اصغرؑ کے وہ معصوم اشارے
ظالم نے سکینہؑ کے طمانچے تو نہ مارے
اے شام غریباں

روداد سنا سبط پیمبر پہ جو گزری
اکبرؑ پہ جو گزری علی اصغرؑ پہ جو گزری
قاسمؑ پہ جو عباسؑ دلاورجو گزری
اور وہ بھی بتا بی بی کی چادر پہ جو گزری
اے شام غریباں

کیا حال ہوا بعد میں شبیر کے گھر کا
کچھ حال بتا مجھ کو اسیروں کے سفر کا
کیسا تھا اجالا بنی ہاشم کے قمر کا
کیا حال تھا اس وقت شہادت کے اثر کا
اے شام غریباں

بے شیر کو جب تیر لگا تھا تو ہوا کیا
وہ شیر جو دریا پہ گیا تھاتو ہوا کیا
مقتل میں اندھیرا جو ہوا تھاتو ہوا کیا
خیمہ جو اسیروں کا جلا تھا تو ہوا کیا
اے شام غریباں

عابد ؑ پہ عروج ایسی مصیبت کی گھڑی تھی
بیمار تھے اور پاؤں میں زنجیر پڑی تھی
ہر چند کہ مشکل تھی مگر بات بڑی تھی
کس طرح سے طے کی گئی منزل جو کڑی تھی
اے شام غریباں

Aey sham e ghariban mujhe kuch haal sunade
Koofe may aseero pe jo guzri hai batade

Aa mujhko bata kya hua darya ke kanare
Maqtal se kahan par gaye zainab ke dulaare
Ab kya huye asghar ke wo masoom ishare
Zaalim ne sakina ke tamache to na maare
Aey sham e ghariban....

Roodad suna sibte payambar pe jo guzri
Asghar pe jo guzri ali akbar pe jo guzri
Qasim pe aur abbas e dilawar pe jo guzri
Aur wo bhi bata bibi ki chadar pe jo guzri
Aey sham e ghariban....

Baysheer ke jab teer laga tha to hua kya
Wo sher jo darya pe gaya tha to hua kya
Maqtal may andhera jo hua tha to hua kya
Jab qaima aseeron ka jala tha to hua kya
Aey sham e ghariban....

Kya haal hua baad may shabbir ke ghar ka
Kuch haal bata mujhko aseero ke safar ka
Kaisa tha ujaala bani hashim ke qamar ka
Kya haal tha us waqt shahadat ke asar ka
Aey sham e ghariban....

Abid pe urooj aisi musibat ki ghadi thi
Bemaar thay aur paon may zanjeer padi thi
Har chand ke mushkil thi magar baat badi thi
Is tarha se tay ki gayi manzil jo kadi thi
Aey sham e ghariban....