Aey matmi Hussain ke salam
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Aey matmi hussain ke salam
Azmat ki inteha tu
Zehra ki hay dua tu
Sab se buland hay tera maqaam

Himmat nahi kisi may is zikr ko mitaye
Batil ne har tarha se har taur aazmaye
Ghar bhi luthaya tum ne
Sar bhi kathaya tum ne
Bakhsha gham-e-Hussain ko dawaam

Jag may nahin hai milti koi misaal teri
Taareef kar rahe hain maazi-o-haal teri
Arbo may aur ajam may
Ibn-e-Ali ke gham may
Peeta raha shahadaton ke jam

In qaatilon ke hamle nakaam ho rahe hain
Teri wafa ke charche ab aam ho rahe hain
Baatil may khalbali hai
Maatam gali gali hai
Neendein hui hai kufr ki haraam

Ro ro ke de rahi hain Zainab duaein tum ko
Hairat se dekhti hain Karbal ki maaein tum ko
Ba sidq e ba yaqeen ho
Karbal ke tum amee ho
Mamnoo hai tumhara khaas-o-aam

Koi maqaam pooche Sajjad se tumhara
Maatam tera bana hai jis ke liye sahara
Wo natawan musafir
Wo dard ka payambar
Karta hai ab bhi shaam, shaam, shaam

In beyaqeenio main ahl-e-yakeen tum ho
Deen-e-Muhammadi ke aslan ameen tum ho
Dil chaahta hai mera
Ho shaam ya sawera
Karta rahoon yuhin tumhe salaam

Saanson may teri khushboo dil main hai pyaar tera
Ab aa bhi jaao sab ko hay intezaar tera
Aey aaliyon se aali
Aey bekason ke waali
Sambhalo ab jahan ka nizaam

May kia hoon arsh wale tum par salam bhejein
In ansuon ke badle kausar ke jaam bhejein
Zikr-e-Hussain baaqi
Shehzad aik khaki
Hay sirf ye Hussain ka ghulam

اے ماتمی حسینؑ کے سلام	سلام
عظمت کی انتہا تو
زہراؑ کی ہے دعاتو
سب سے بلند ہے تیرا مقام

ہمت نہیں کسی میں اِس ذکر کو مٹائے
باطل نے ہر طرح سے ہر طور آزمائے
گھر بھی لٹائے تم نے
سر بھی کٹائے تم نے
بخشا غمِ حسین ؑ کو دوام

جگ میں نہیں ہے ملتی کوئی مثال تیری
تعریف کر رہے ہیں ماضی و حال تیری
عربوں میں اور عجم میں
ابنِ علیؑ کے غم میں
پیتا رہا شہادتوں کے جام

ان قاتلوں کے حملے ناکام ہو رہے 
تیری وفا کے چرچے اب عام ہو رہے ہیں
باطل میں کھلبلی ہے
ماتم گلی گلی ہے
نیندیں ہوئی ہیں کفر کی حرام

رو رو کے دے رہی ہے زینبؑ دعائیں تم کو
حیرت سے دیکھتی ہیں کربل کی مائیں تم کو
با صدق با یقیں ہو
کربل کے تم امیں ہو
ممنوں ہے تمہارا خاص و عام

کوئی مقام پوچھے سجاّدؑ سے تمہارا
ماتم تیرا بنا ہے جس کے لئے سہارا
وہ نا تواں مسافر
وہ درد کا پیمبر
کرتا ہے اب بھی شام شام شام 

ان بے یقینیوں میں اہلِ یقین تم ہو
دینِ محمّدی کے اصلا امین تم ہو
دل چاہتا ہے میرا
ہو شام یا سویرا
کرتا رہوں یونہی تمہیں سلام

سانسوں میں تیری خوشبو دل میں ہے پیار تیرا
اب آ بھی جاؤ سب کوہے انتظار تیرا
اے عالیوں سے عالی
اے بے کسوں کے والی
سنبھالو اب جہان کا نظام

میں کیا ہوں عرش والے تم پر سلام بھیجیں
ان آنسوؤں کے بدلے کوثر کے جام بھیجیں
ذکرِ حسینؑ باقی
شہزاد ایک خاکی
ہے صرف یہ حسینؑ کا غلام