Bohat sukoon se Khuda ki taraf chala hay Hussain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Bohot sukoon sai khuda ki taraf chala hai hussain
Pata chaley na yeh maan ko tarap raha hai hussain

Jo mera farz tha amma ada kia main nay
Zameen main lasha-e-Asghar chupa dia main nay
Jawan baitay ka lasha utha liya main nay
Main ab bhi pyasa hoon pani nahi piya main nay

Ghamon sai bhai kay tooti hui hay meri qamar
Jigar sai Akbar-e-mehru kay kat raha hai jigar
Khuda ka shukr ada kar raha hoon lashon par
Na royen aap bohot mutmain hoon main madar

Meri hi goad mai bachcha hua mera beda
Jigar sai apnay jawan kay nikali mai nay sina
Galay pey kund jo khunjar yeh ho raha hay rawan
Bas aakhri yeh mera imtehaan hai amma

Zameen aa na saki raas koi baat nahin
Nahi madad koi pass koi baat nahin
Hui na khatm meri pyaas koi baat nahin
Khuda ko de diya Abbas koi baat nahin

Nikal ke kabr se nana meri taraf hain rawan
Yeh dekho amma ke baba bhi aa gaye hain yahan
Hai muntazir mera is dam Khuda-e-kaun-o-makan
Sabhi yeh kehte hain Shabbir hai mera mehmaan

Qamar yeh kehte huay mutmain huay maula
Nikal ke aayega ghaibat se jab pisar mera
Woh apne saath meri zulfiqar laye ga
Woh lega karb-o-bala aur shaam ka badla

بہت سکوں سے خدا کی طرف چلا ہے حسینؑ
پتہ چلے نہ یہ ماں کو تڑپ رہا ہے حسینؑ

جو میرا فرض تھا اماں ادا کیا میں نے
زمیں میں لاشہءِ اصغرؑ چھپا دیا میں نے
جوان بیٹے کا لاشہ اٹھا لیا میں نے
میں اب بھی پیاسا ہوں پانی نہیں پیا میں نے

غموں سے بھائی کے ٹوٹی ہوئی ہے میری کمر
جگر سے اکبرِؑ مہرو کے کٹ رہا ہے جگر
خدا کا شکر ادا کر رہا ہوں لاشوں پر
نہ روئیں آب بہت مطمئن ہوں میں مادر

میری ہی گود میں بچہ ہوا میرا ذبحہ
جگر سے اپنے جواں کے نکالی میں نے سِنا
گلے پہ کند جو خنجر یہ ہو رہا ہے رواں
بس آخری یہ میرا امتحاں ہے اے اماں

زمین آ نہ سکی راس کوئی بات نہیں
نہیں مدد کو کوئی پاس کوئی بات نہیں
ہوئی نہ ختم میری پیاس کوئی بات نہیں
خدا کو دے دیا عباسؑ کوئی بات نہیں

نکل کے قبر سے نانا میری طرف ہیں رواں
یہ دیکھو اماں کہ بابا بھی آ گئے ہیں یہاں
ہیں منتظر میرا اِس دم خدائے کون و مکاں
سبھی یہ کہتے ہیں شبیرؑ ہے میرا مہماں

قمر یہ کہتے ہوئے مطمئن ہوئے مولاؑ
نکل کے آ ئے گا غیبت سے جب پسر میرا
وہ اپنے ساتھ میری ذوالفقار لائے گا
وہ لے گا کرب و بلا اور شام کا بدلہ