Kaisay kaha ho ga Ali Akbar ko alwida beemar ne
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



کیسے کہا ہوگا علی اکبرؑ کو الوداع بیمار نے
الوداع الوداع کب آؤ گے پوچھا ہوگا
رو رو کے سوگوار نے

بابا کے سینے سے لپٹ کر روتی ہوگی
مجھے چھرڑ کے مت جاؤ میں تنہا مر جاؤں گی
روؤں گی جب پڑے اِن اجڑے اجڑے صحنوں میں
غربت کے دن گزارنے

لیلیٰ نے جب چوما ہائے صغراؑ کے سر کو
حسرت سے تکا ہوگا ماں نے علی اکبرؑکو
آنکھوں سے آنسوؤں کے موتی توڑ دئے ہوں گے
بیٹی کو ماں کے پیار نے

اصغرؑ کو رہ رہ کر وہ گود میں لیتی ہوگی
شاید نہ ملیں پھر ہم تڑپ کر کہتی ہوگی
کیا کہیں کس طرح روتے ہوئے بہن کی جھولی کو
چھوڑا تھا شیر خوار نے

عباسؑ دم رخصت  ہاتھوں کو ملتے ہوں گے
گر کچھ نہ کہا ہوگا اشک تو ڈھلتے ہوں گے
آئیں گے ہم تجھے لینے یہ عہد کیا ہوگا
کمسن سے علمدارؑ نے

حسنین کے صدقے میں کرم یہ علیؑ نے کیا ہے
مولاؑ کے گداگر کا شرف زہراؑ نے دیا ہے
دو جہاں کی دعائیں لی ہیں ثانی زہراؑ سے
اختر سے پرسہ دار نے 

Kaisai Kaha Hoga Ali Akber ko Alvida Beemar Nai
Alwida alwida kab aao gai poocha hoga ro ro kai sogvaar nai

1) Baba kai seenai sai lipat ker roti hogi
Mujhai chor kai mat jao main tanha mar jaun gi
Roun gi jab perhain in ujrai ujrai sehno' main ghurbat kai din guzaarnai

2) Laila na jab chooma hy Sughra kai sarko
Hasrat sai dhaka ho ga maan nai Ali Asgher ko
Aankhon sai ansuyon kai moti dhaal kiyain hongai beti ko maa kai piyaar nai

3) Asgher ko reh reh ker woh gaud main laiti hogi
Shayad na milai phir ham tarap ker kehti hogi
Kiya kahain kis terha rotai huwai behan ki gaudi ko chora tha sheer khwaar nai

4) Abbas damai rukhsat hathon ko maltay hongay
Gar kuch na kaha hoga to behtai hongai
Aayaingai ham tujhai lainaigai ahad kiya hoga bibi sai alamdar nai

5) Hasnain kai sadaqi main karam Haider nai kiya hai
Mola kai gadagar kah sharaf zehra say liya hai
Do jahan ki duain lee hain sani-e-zehra sai Akhtar sai pursa daar nai