Khat Fatima Sughra se yeh baba ka likha hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Khat Fatima Sughra ne ye baba ko likha hai
Bemaar hoo marti hoo ye sab tumko pata hai

Jis roz se dekha hai moharram ka naya chand
Ye kaise likun baba ke dil toot gaya hai
Khat Fatima Sughra ne....

Wada to kiya baba nibhane nahi aaye
Beemaar se kis baat pe moo pher liya hai
Khat Fatima Sughra ne....

Baba mujhe dasti hai ye tanhai watan ki x2
Ye ghar ki udaasi hai to phir qabr mei kya hai
Khat Fatima Sughra ne....

Laut aate hai ghar shaam ke hote hi parinde
Kunba mera kyon ab bhi safar mei hi raha hai
Khat Fatima Sughra ne....

Tum jab se gaye ghar se ye ghar qabr hai meri
Mai zinda hai aise ke koi laasha pada hai
Khat Fatima Sughra ne....

Baba mere asghar ka to kuch haal sunao
Us be-zaban ne mujhko kabhi yaad kiya hai
Khat Fatima Sughra ne....

Dekha hai Hasan Sadiq rehaan ke nawho mei
Ashkon ka samandar hai jo palkon pe ruka hai
Khat Fatima Sughra ne....

خط فاطمہ صغریٰؑ نے یہ بابا کو لکھا ہے
بیمار ہوں مرتی ہوں یہ کب تم کو پتہ ہے

جس روز سے دیکھا ہے محرم کا نیا چاند
یہ کیسے لکھوں بابا کہ دل ڈوب گیا ہے

وعدہ تو کیا وعدہ نبھانے نہیں آئے
بیمار سے کس بات پہ منہ موڑ لیا ہے

بابا مجھے ڈستی یہ تنہائی وطن کی
یہ گھر کی اداسی ہے تو پھر قبر میں کیا ہے

لوٹ آتے ہیں گھر شام کے ہوتے ہی پرندے
کنبہ میرا کیوں اب بھی سفر میں ہی رہا ہے

تم جب سے گئے گھر سے یہ گھر قبر ہے میری
زندہ ہوں میں ایسے کہ کوئی لاشہ پڑا ہے

بابا میرے اصغر کا تو کچھ حال سناؤ
اس بے زباں نے مجھ کو کبھی یاد کیا ہے

دیکھا ہے حسن صادق ریحان کے نوحوں میں
اشکوں کا سمندر ہے جو پلکوں پہ رکا ہے