Wa waila haey wa waila, Mazloom ka matam wa waila
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

واویلا  ہائے  واویلا
سب مل کے کرو اب اہلِ عزا
واویلا  ہائے  واویلا

اسلام نبیؐ کا بچایا ہے، تقدیر کا دیپ جلایا ہے
قرآن کا مان بڑھایا ہے، توحید پہ گھر کو لٹایا ہے
شبیرؑ کا ماتم، واویلا
دلگیر کا ماتم، واویلا
یہ اہل عزا کا ہے نوحا
واویلا  ہائے  واویلا

ہمشکلِ پیمبرؑ مارا گیا، چھ ماہ کا اصغرؑ مارا گیا
عباسِؑ دلاور مارا گیا، شبیرؑ کا دلبر مارا گیا
اکبرؑ کا ماتم، واویلا
اصغرؑ کا ماتم، واویلا
زینب کےؑ لبوں پر تھی یہ صدا
واویلا  ہائے  واویلا

کیسے ہو رقم احوالِ جفا، اعدا نے ستم کچھ ایسا کیا
ؑقاسمؑ کا جسد پامال ہوا، بے حال ہوئی امِ فروا
قاسمؑ کا ماتم، واویلا
بیکس کا ماتم، واویلا
قاسمؑ کا غم ہے اور کبریٰؑ
واویلا  ہائے  واویلا

کیا غربت تھی تنہائی تھی، جب شامِ غریباں آئی تھی
اِک ظلم کی بدلی چھائی تھی، پیغامِِ اسیری لائی تھی
غربت کا ماتم، واویلا
عِترت کا ماتم، واویلا
سب اہلِ حرم کی چھینی ردا
واویلا  ہائے  واویلا

پابندِ رسن سب اہلِ حرم، خاموش اٹھائے بارِ ستم
ہے محو سفر لرزیدہ قدم، سینوں میں لئے شبیرؑ کا غم
مظلوم کا ماتم، واویلا
معصوم کا ماتم، واویلا
کرتا ہے فلک اِن پر گریا
واویلا  ہائے  واویلا

بچھتا ہے جہاں پر فرشِ عزا، ہوتا ہے جہاں پر غم برپا
پُرسے کو پہنچتی ہیں زہراؑ، کرتے ہوئی ساجد یہ نوحہ
سرورؑ کا ماتم، واویلا
گھر بھر کا ماتم، واویلا
پیاروں پر کرتی ہے روز بُکا
واویلا  ہائے  واویلا