Ayyuhan nas shuma ra bahaqqe khoon e Hussain(a.s.)
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

ایہا الناس شما را بحق خون حسینؑ
ایں جئی جوش نمایاں اہں جئی شیون و شین

ایہالناس تمہيں خون حسینؑی کی قسم
کم نہ ہو رنج و الم اور یہ شور ماتم

یہ وہ ماتم ہے جو زہراؑ و علیؑ کرتے رہے
عصر عاشور یہ ماتم تو نبیۖ کرتے رہے
جب لٹا فاطمہ زہراؑ کا بھرا گھر رن میں
علقمہ روتی تھی اور کرب و بلا کرتی تھی بین

شد سکینہؑ جو گرفتار اجل در زنداں
نہ رفیق نہ انیس نہ دم غم خواراں
مرگئ شام کے زنداں میں سکینہؑ گھٹ کر
قتل کے وقت بھی آۓ نہيں بھیّـا اکبرؑ
جس کی حسرت رہی دل میں ہی رہائی نہ ملی
خوں بھرا کرتا کفن بن گیا مرقد زنداں

وہ جو فرزند جواں خلد سناں در سینا
پدر سوختہ جاں گریاں کند وا ویلا
مرگیا سامنے اٹھارا برس کا بیٹا
ہاۓ اس عمر میں سجتا ہے سروں پر سہرا
نور آنکھوں کا گیا ٹھوکریں کھاتے ہيں حسینؑ
در خیمہ پہ کھڑی روتی ہے بنت زہراؑ

تربت اصغرؑ معصوم بہ میداں بینی
بر راے اشک فشانند حسینؑ ابن علیؑ
اک ننھی سی لحد کھود کے میداں میں حسینؑ
کہتے ہيں سونپا خدا کو تجھے اے نور عین
خواب سب آنکھوں کا پیوند ہوۓ ام ربابؑ
خالی جھولا ہوا اور کوکھ تمہاری اجڑی

رفتہ شد چادر زینبؑ سر بازار جفا
سینہ کوبی با کنند اہل عزا واویلا
سر بازار جفا بنت علیؑ بے چادر
بھائ اٹھارا تھے کوئ نہ رہا سر پہ مگر
رسیاں قید ستم رنج و الم کنبہ کا غم
تن بہ تقدیر ہے اس حال میں بنت زہراؑ

من نا خواہم دگر زندگی آخر لشکر
بعد عباسؑ علمدار و علیؑ اکبرؑ
جی کے اب کیا کریں شبیرؑ کہ لشکر نہ رہا
وہ علمدار وہ عباسؑ دلاور نہ رہا
عصر کا وقت لیے جام شہادت آیا
رکھ دیا سجدہ معبود میں شبیرؑ نے سر

چشمِ ما اشک فشاں در غم شبیرؑ ہنوذ
من نا خواہم ما سواء ماتم شبیرؑ ہنوذ
اشک آنکھوں سے نہيں تھمتے ہیں ریحان کبھی
یاد آجاتا ہے جب شام کا زندان کبھی
جب بھی قرطاس پہ میں نوحہ شبیرؑ لکھوں
میری تحریر میں آتا ہے میرے قلب کا سوز

ایہاالناس تمہیں خون حسینؑی کی قسم
کم نہ ہو رنج و الم اور یہ شور ماتم

ایہا الناس شما را بحق خون حسینؑ
ایں جئی جوش نمایاں اہں جئی شیون و شین