Yadakal khair bhi ham
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



یاحسینؑ یاحسینؑ

ہاۓ اسیر قافلہ دربار شام جب آیا
یزید، زینبؑ کبریٰؑ سے یوں ہوا گویا
لو آج راز وﺗﻌﺰوﻣﻦ ﺗﺸﺎء کا کھلا
کہ باوقار ہوا کون، کون ہے رسوا

او بد کلام ٹھہر، بولی زینبؑ کبریٰؑ
نشے میں مست ہے آیت یہ پوری سب کو سنا
وہ ہاتھ خیر کا ہے کون مجھ کو یہ تو بتا
کہ جس سے ذلت و توخیر بانٹتا ہے خدا
وہ ہاتھ تُو ہے کہ ہم اہلیبیتؑ ہیں اُس کے
ہم ہی ہیں عزت و ذلت کے بانٹنے والے

یدک الخیر بھی ہم ربِّ کعبہ کی قسم
اُنہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

زینبؑی لہجے میں آواز علیؑ گونج اٹھی
ظلم اور جبر کے دربار پہ بجلی سی گری
لائق حمد ہے جس نے ہمیں عزت بخشی
سورہ روم سے شہزادی نے آیت یہ پڑھی
جو بُرے تھے سو بُرا ان کا ہی انجام ہوا
جس نے قرآن کو جھٹلایا وہ ناکام ہوا

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

کیا کہا تو نے کہ حق سے ہمیں رسوائی ملی
ہم یہ کہتے ہیں ہمیں عزت و سچائی ملی
ہم کو ‍قرآن ملا رب کی شناسائی ملی
میرے پیاروں کو سناں پر بھی پذیرائی ملی
ابن مرجانہ تیرے جبّـہ و دستار تلک
کربلا آگئی اب شام کے دربار تلک

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

اے میرے بھائی کے قاتل ہوس زر کے غلام
انتہا یہ بھی ہے، میں اور کروں تجھ سے کلام
یوں مخاطب ہوں کہ دل میں ہے میرے غم کی حسام
مجھ کو دینا ہے حسینؑ ابن علیؑ کا پیغام
کرکے تضحیک نبیۖ  تجھ کو مزا آتا ہے
انـتـقـامِ اُحـد و بـدر پہ اتراتا ہے

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

اے یزيد ستمی جاگ بہت شاد ہے تو
قید کر کے ہمیں سمجھا ہے کہ آزاد ہے تو
یہ تیری خام خیالی ہے کہ آباد ہے تو
نسل درنسل سدا کے لیے برباد ہے تو
فیصلہ رب کا ہے مہلت ہے سنبھل جانے کی
ڈھیل دی جاتی ہے ظالم کو سنبھل جانے کی

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

آج کس زعـم میں اشراف کا خوں پیتا ہے
کاٹ کے باغ رسالت کو تو خوش ہوتا ہے
چیختا پھرتا ہے تو بدر کا یہ بدلہ ہے
مجھ کو حیرت نہیں ہندہ ہی کا تو بیٹا ہے
ہوگا معلوم شـقاوت کا نتیجہ اس دن
بدلہ یہ کیا ہے، لیا جاۓ گا بدلہ اس دن

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

کردیا قتل ہميں تو نے غلط سوچا ہے
گوشت اپنا ہی چبایا ہے بدن نوچا ہے
کیا خبر تجھ کو کہ ہم لوگوں کا رتبہ کیا ہے
آل عمران میں اللہ کا یہ وعدہ ہے
شہداء صورت قرآن سدا زندہ ہیں
وہ تو وہ ان کے محبّـان سدا زندہ ہیں

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

محو حیرت ہوں کہ جنہیں رب نے سرافراز کیا
عـلـم قرآن دیا اور یـدک الـخـیر کہا
آہ ان باغ رسالت کے گلوں کو مسلا
آستینوں سے تمہاری ہے لہو ان کا بہا
پاک و پاکیزہ بناۓ تھے جو خود رب نے بدن
آج صحرا میں پڑے ہيں وہ ہی بے گورو کفن

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

آزما لے ستمی زاد ستم کے حربے
دیکھ باقی تیرے دل میں کوئ حسرت نہ رہے
رہ گیا ہو جو ستم کوئ تو وہ بھی کرلے
جیت کر ہار گئ تیری حکومت ہم سے
فکر شبیر تو پھیلے گی محمدۖ کی قسم
یہ تیرے بس میں نہیں مالک و مختار ہیں ہم

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

حافظہ نہج البلاغہ کا تھا وہ رعب و جلال
موت کی خاموشی جیسا ہوا دربار کا حال
جاگ اٹھی بیبیاں جو غم سے مسلسل تھیں نڈھال
بھرے دربار سے مظلوم خطیبہ کا سوال
کلمہ جس کا پڑھا اس کا جگر کاٹ لیا
اپنے محسن کے نواسے کا ہی سر کاٹ لیا

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

تم تھے نو لاکھ درندے وہ بہتــّر انساں
ان بہتــّر میں بھی اصغر سا تھا اک تشنہ دہاں
ایسے معصوم، قسم کھاتا ہے جن کی قرآں
ہاۓ ان پیاسوں کے حلقوم پہ خنجر تھا رواں
تم یہ کہتے ہو پَئے جنگ حسین آیا تھا
بیٹیوں بہنوں کو پھر ساتھ ميں کیوں لایا تھا

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

اے یزید آج نہ کیوں تجھ پہ فلک ٹوٹ پڑے
تو نے وہ ظلم کیے جس پہ محمدۖ روۓ
ہاۓ ناموس نبیۖ کوچہ و بازار پھرے
درودیوار سجے کوٹھوں سے پتھر برسے
شامیوں ہم پہ نیا اب یہ غضب کرتے ہو
چھوٹی زہرا کو کنیزی میں طلب کرتے ہو

یدک الخیر بھی ہم رب کعبہ کی قسم
انہی ہاتھوں میں رسن سر دربار ستم

ختم تقریر ہوئ محشر خاموش اٹھا
یاعلی آپ کی بیٹی کا عجب خطبہ تھا
مردہ دربار پہ چھائ تھی خطیبہ کی صدا
بچھ گئی سرور و ریحان وہاں فرش عزا
بھائ کے سر پہ نظر زینبؑ کبری کی پڑی
جھک گئ بالی سکینہ پہ علی کی بیٹی

Yad e kal khair
Ya Hussain , ya Hussain , ya hussain , ya hussain
Haye!! Aseer qafila darbar e sham jab aaya,
Yazeed (LA) Zainab-e-Kubra (SA) se yun huya goya
Lo aj raaz “Wa tu izzu man tasha” ka khula
Kay bawaqar hua kon, kon hay ruswa
O! Bad kalam tehar, O! Bad kalam tehar, Bolen Zainab-e-Kubra (SA)
Nashay mai mast hay aayat yeh poori sab ko suna,
Wo hath khair ka hay kon mujh ko yeh to bata
Kay jis se zilat o toqeer bant’ta hay khuda
Wo hath tu hay k hum? Wo hath tu hay k hum?
Hum Ahlebait(AS) hain us kay, hum he hain izzat o zillat k bantnay walay
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan, sar e darbar e sitam
Zainabi (AS) lehjay mai awaz e Ali (AS) goonj uthi
Zulm or jabr k darbar par bijli se giri
Laiq e hamd hay jis ne hamain izzat bakhshi
Surah e Rom se shehzadi ne aayat yeh parhi
Jo buray thay so bura he un ka anjam hua
Jis ne Quran ko jhutlaya wo nakaam hua
Yad e kal khair bhi hum, Rab e Kaaba ki Qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Kia kaha tu ne? kay haq se hamain ruswai mili
Hum yeh kehtay hain hamain izzat o sachai mili
Hum ko Quran mila Rab ki shanasaye mili
Mere pyaro ko sina par bhi pazeraye mili
Ibn e Marjana teray jubba o dastar talak
Karbala aagaye ab sham kay darbar talak
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Aye mere bhai kay qatil hawas e zar k ghulam
Imtehan yeh bhi hay or mai karun tujh se kalam
Yun mukhatib hunk ay dil mai mere gham ki
Mujh ko dena hay Hussain ibn e Ali (AS) ka paygham
Kar kay tazheek e Nabi (SAWW), tujh ko maza aata hay
Inteqam e badr o ohad pe itrata hay
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Aye Yazeed! Aye sitmai! Jag bohat shaad hay tu
Qaid karke hamain samjha hay kay azad hay tu
Yeh teri khaam khayali hay k aabad hay tu
Nasl dar nasl sada kay liye barbad hay tu
Faisla Rab ka hay, mohlat hay sambhal janay ki
Dheel dee jati hay zalim ko sambhal janay ki
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Aaj kis zom mai ashraf ka khoon peeta hay
Kat kay bagh e Risalat ko tu khush hota hay
Cheekhta phirta hay tu badr ka yeh badla hay
Mujh ko herat nahi hinda he ka tu beta hay
Hoga maloom shaqawat, ka nateeja us din
Badla yeh kia hay, liya jaye ga badla us din
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Kardia qatal hamain tu ne ghalat socha hay
Gosht apna he chabaya hay badan nocha hay
Kia khabar tujh ko k hum logo ka rutba kia hay
Aal e Imran mai Allah ka yeh waada hay
Shohada surat e Quran, sada zinda hain
Wo to wo un kay muhiban sada zinda hain
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Haye! Mehv e heart hun jinhain Rab ne sar afraz kiya
Ilm e Quran diya or yad e kal khair kaha
Ah! Un Bagh e Risalat kay guloo ko masla
Aasteeno se tumhari hay lahoo un ka baha
Pak o pakeeza banaye, thay jo khud rab ne badan
Aj sehra mai paray hain wohi be gor o kafan
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Aazma lay sitami jag sitam kay harbay
Dekh baqi koi dil mai teray hasrat na rahay
Reh gaya ho jo koi sitam toe wo bhi karlay
Jeet kar har gaye teri hukumat hum say
Fikr e Shabbir (AS) to phaylay gi, Muhammad (SAWW) ki qasam
Yeh teray bus mai nahi malik o mukhtar hain hum
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Hafiz e Nehj e Balagha ka tha wo rob o jalal
Maut ki khamoshi jesa hua darbar ka haal
Jag utheen bibiyan jo theen gham se musalsal nidhal
Bharay darbar se mazloom khateeba ka sawal
Kalma jis ka parha, us ka jigar kat liya
Apne Mohsin he kay nawasay he ka sir kat liya
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Tum thay nau lakh darinday wo bahatar (72) insaan
Un bahatar mai bhi tha ik Asghar (AS) sa tishna dahan
Aisa masoom qasam khata hay jin ki Qur’an
Haye un pyaso kay hulqoom pe khanjar tha rawan
Tum yeh kehtay ho paye jung Hussain (AS) aaya tha
Betio behno ko phir sath mai kyun laya tha?
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Aye Yazeed(LA)! Aj kyun na tujh pe falak toot paray
Tu ne who zulm diye jis ne Muhammad (SAWW) roye
Haye namoos e Nabi (SAWW) kocha o bazaar phiray
Dar o deewar sajay kothon se pathar barsay
Shamio hum pe naya, ab yeh ghazab kartay ho
Choti Zehra (SA) ko kaneezi mai talab kartay ho?
Yad e kal khair bhi hum, Rab e kaaba ki qasam
Unhi hathon mai rasan sar e darbar e sitam
Khatam taqreer hui, mehshar e khamosh utha
Ya Ali (AS)! Ap ki beti ka ajab khutba tha
Murda darbar pe chahi thi khateeba ki sada
Bich gaye Sarwar o Rehan wahan farsh e Aza
Bhai kay sir pe nazar, Zainab e Kubra (SA) ki pari
Jhuk gaye Bali Sakina (SA) pe Ali (AS) ki