Jab rida sar se chini may sada deti rahi
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



اۓ میرے عباسؑ ‘ ہاۓ میرے عباسؑ
ہاۓ میرے عباسؑ ‘ ہاۓ میرے عباسؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

آل عمران کہاں ‘ اور زندان کہاں
لے بہن قید ہوئ ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

ہم کو پانی نہ ملے ‘ تیری خوشبو تو رہے
تیرے بازو نہ کٹیں ‘ چاہے مشکیزہ چھدے
یہ مگر ہو نہ سکا ‘ تیرے بازو ہیں جدا
ہم پہ ہے تشنہ لبی ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

دھوپ میں تو تھا شجر ‘ تجھ سے آباد تھا گھر
ہے برہنہ میرا سر ‘ کیا نہیں تجھ کو خبر
اے علمدار وفا ‘ اس بہن کو با خدا
تجھ سے ڈھارس تھی بڑی ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

آگئ شام علم ‘ لٹ گۓ اہل حرم
ریت پر جلتی ہوئ ‘ ہوگيا ٹھنڈا علم
پرسہ دینے کے لیے ‘ تجھ سے ملنے کے لیے
آگۓ بابا علی ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

کیا کہوں شیر میرے ‘ بے ردا ہم کو لیے
یہ مسلماں سارے ‘ شہر در شہر گۓ
خلقت کوفہ کبھی ‘ خلقت شام کبھی
بارہاں ہم پہ ہنسی ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

کتنی بے بس تھی بہن ‘ اے شہنشاہ وفا
نام لے لے کہ میرا ‘ جب یہ ظالم نے کہا
ناز تھا جس پہ تجھے ‘ اب بلاؤ نہ اسے
اور میں روتی رہی ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

قید خانے میں خزاں  ‘ جب سکینہ کو ملی
دے کے کرتے کا کفن ‘ بچی دفنائ گئ
اس گھڑی نام تیرا ‘ صورت ناد علی
بس میں دہراتی رہی ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

رویا ریحان قلم ‘ کرکے یہ بات رقم
خون میں ڈوب گیا ‘ میرے غازیؑ کا علم
زخمی زینبؑ کا جگر ‘ خوں فشاں شاہ کا سر
آۓ خیموں میں شقی ‘ تو نہ آیا غازیؑ

جب ردا سر سے چھنی
میں صدا دیتی رہی
تو نہ آیا غازیؑ

Jab rida sar se chini mai sada deti rahi
Tu na aaya Ghazi

aale imran kahan aur zindaa kahan
ye behan qaid hui tu na aaya Ghazi
jab rida sar...

humko pani na milay, teri khusboo to rahe
tere baazu na kate, chahe mashkeeza chiday
ye magar ho na saka, tere baazu hai juda
mujhpe hai tashalabi, tu na aaya Ghazi
jab rida sar...

dhoop may tu tha shajar, tujhse aabaad tha ghar
hai barehna mera sar, kya nahi tujhko khabar
ay alamdare wafa, is behan ko ba-khuda
tujhse dhaaras thi badi, tu na aaya Ghazi
jab rida sar...

aagayi shame-alam, lutgaye ahle haram
rayt par jalti huvi, hogaya thanda alam
pursa dene ke liye, mujhse milne ke liye
aagaye baba ali, tu na aaya Ghazi

kya kahoo sher mere, berida humko liye
ye musalman saare, shehr dar shehr gaye
khilqate koofa kabhi,  khilqate shaam kabhi
aur haa hum pe hasi, tu na aaya Ghazi
jab rida sar...

kitni bebas thi behan, ay shehenshahe wafa
naam le le ke mera, jab ye zaalim ne kaha
naaz tha jispe tujhe, ab bulao na usay
aur mai roti rahi, tu na aaya Ghazi
jab rida sar...

qaid-khane may qaza, jab sakina ko mili
deke kurte ka kafan, bachi dafnayi gayi
us ghadi naam tera, surate nade-ali
dukh may dohrati rahi, tu na aaya Ghazi
jab rida sar...

roya rehaan qalam, karke ye baat raqam
khoon may doob gaya, mere ghazi ka alam
zakhmi zainab ka jigar, khoon-fishan shaah ka sar
aaye qaimon may shaqi, tu na aaya Ghazi
jab rida sar