Baba teray baghair bhala kaisay jiyon gi
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Baba Terai Baghair Bhala Kaisai Jiyun Gi 
Tanha Rahun Gi Qaid Main Zindaan Main Marun Gi 

1) Roti hoi behna ko Cha Cha chor na jana 
Yeh akhari rishta bhi kahin chor na jana 
Pani kai liyai aap sai ab main na kahun gi 


2) Baba ko dekthi thi to aatai thai nazar teer 
Aik pal main sakina sai juda ho gayai Shabbir 
Seenai sai lagalo mujhai ab kis sai kahun gi 

3) Guzrai thai kis terha sai meri Shaam-e-Ghariban 
Asgher ko sada dun gi main lashon kai dermaiyan 
Hathon main Pani hoga magar main na piyun gi 

4) Main aala-e-muhammad ka hun anmol nageena 
Rakha hai aap hi nai mera naam Sakina 
Ab qaid saveeron ki main salaar banu gi 

5) Tasveer Payamber ki dikha kyun nahi daitai 
Baba mujhai Asgher mila kyun nahi daitai 
Yeh sadma judayi ka bhala kaisai sahun gi 

6) Baba ka rasta rok kai rahon main khari hai 
Masoom Sakina pai qayamat ki ghari hai 
Ro Ro kai yeh kehti hai kai janai nahi dun gi 

7) Hai phir qiyamat ki pathron ki hai barsaat 
Main haath uthaun to mit jayain qaiyanaat 
Yeh bad dua jahan kai liyai main na karun gi 

ابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

تنہا رہوں گی قید میں زنداں میں مروں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

سوتی ہوئ بہنا کو چچا چھوڑ نہ جانا
یہ آخری رشتہ بھی کہیں توڑ نہ جانا
پانی کے لیے آپ سے اب میں نہ کہوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

بابا کو دیکھتی تھی تو آتے تھے نظر تیر
ایک پل میں سکینہ سے جدا ہوگۓ شبیر
سینے سے لگا لو مجھے اب کس سے کہوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

گزرے گی کس طرح سے میری شام غریباں
اصغر کو صدا دوں گی میں لاشوں کے درمیاں
ہاتھوں میں پانی ہوگا مگر میں نہ پیئوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

معراج محمدۖ کا انمول نگینہ
رکھا ہے آپ ہی نے میرا نام سکینہ
اب قید صغیروں کی میں سالار بنوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

تصویر پیعمبرۖ کی دکھا کیوں نہیں دیتے
بابا مجھے اصغر سے ملا کیوں نہیں دیتے
یہ صدمہ جدائ کا بھلا کیسے سہوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

بابا کا رستہ روک کے راہوں میں کھڑی ہے
معصوم سکینہ پہ قیامت کی گھڑی ہے
رو رو کے یہ کہتی ہے کہ جانے نہیں دوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

ہے بھیڑ قیامت کی پتھروں کی ہے برسات
میں ہاتھ اٹھاؤں تو مٹ جاۓ کائنات
یہ بد دعا جہاں کے لیے میں نہ کروں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

تنہا رہوں گی قید میں زنداں میں مروں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی

بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی
بابا تیرے بغیر بھلا کیسے جیئوں گی