Uthay kaise bali Sakina ka lasha
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

اٹھے کیسے بالی سکینہؑ کا لاشہ
پریشاں ہے زنداں میں ثانی زہراؑ

مصیبت کی منزل یہ کتنی کڑی ہے
یتیمہ کی میت زمیں پر پڑی ہے
بنے قبر کیوں کر اٹھے کیسے لاشہ
پریشاں ہے زنداں میں ثانی زہراؑ

اٹھے کیسے بالی سکینہؑ کا لاشہ

یہ غربت یہ تنہائی یہ قید خانہ
ہے زنجیر میں جکڑا بیمار بھیّا
اٹھاۓ بہن کا وہ کیسے جنازہ
پریشاں ہے زنداں میں ثانی زہراؑ

اٹھے کیسے بالی سکینہؑ کا لاشہ

سکینہؑ تجھے اب کہاں پاؤں بیٹی
اکیلی کہاں چھوڑ کر جاؤں بیٹی
بہت تنگ و تاریک ہے قید خانہ
پریشاں ہے زنداں میں ثانی زہراؑ

اٹھے کیسے بالی سکینہؑ کا لاشہ

مدد کرنے آجاؤ میرے برادر
کہاں سوگۓ میرے عباس جاکر
ذرا آکے دے دو جنازے کو کاندھا
پریشاں ہے زنداں میں ثانی زہراؑ

اٹھے کیسے بالی سکینہؑ کا لاشہ

بیمار ہاتھوں میں ہتھکڑیاں پہنے
گلے میں طوق گراں بار اس کے
اتارے لحد میں بھلا کون لاشہ
پریشاں ہے زنداں میں ثانی زہراؑ

اٹھے کیسے بالی سکینہؑ کا لاشہ