Beta hay tu Ali ka (Us waqt jab se Zainab) darbar may
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Allahuma adkhil alaa ahlil kubooris-suroor
Allahuma aghni kulli fakeer
Allahuma ashbi kulla jaai
Allahuma ashfi kulli mareez (x2)

Behaqqe hazrat-e-Abbas
Abbas, Abbas, Abbas

Beta hay tu Ali Ka, Zahra ki tu dua hay
Shabbir tera aaqa, Ummul Baneen maa hay

Har surat o chalan may hayder se na juda hay
Ta hashr tuj se kaayam dunya may bas wafa hay

Abbas, Abbas, Abbas (x2)

Tere alam ko thaame, har shaks keh raha hay
Mazloome Karbala ka, Zainab ka waasta hay
Pardesi koyi aysa, Pardes me na ujde
Sadke mei uske jis ka, Ghar baar lutgaya hay
Abbas, Abbas, Abbas (x2)

Us wakt jabke Zainab, Darbaar mei gayi thi
Qari Namazio sey, Mehfil saji huwi thi
Zaalim yeh puchta tha, Ghazi tera kaha hay
Baalo se muh chupaaye, Zainab yeh keh rahi thi
Abbas,Abbas,Abbas (x2)

Taqdeer ke sataye, tere dar pe sar jhukaye
Ashko ki iltija ham, Ghaazi tuje sunaye
Beemare saaribaan ke, Zakhmo ka waasta hay
Jitne bhi khasta dil hay, Mowla shifa wo paaye
Abbas, Abbas, Abbas (x2)

Dil ki muraad Gazi , tere Alam se paaey
Roti huwi jo maaen, Tere Alam pe aaey
Zahra ke dardey pehlu ka, Deti hay waasta
Fizza ki kaneezi mei, Mera bhi naam aaey
Abbas, Abbas, Abbas (x2)

Shaame Ghariban mei jis, Ka kurta jalgaya hay,
Kaano se baaliya bhi, Haaye Shimr legaya hay
Is bebasi se Mawla, Bacchi koi na tarse
Farsh-e-Aza pe rokar, Har dil yeh kehraha hay
Abbas, Abbas, Abbas (x2)

Jitne bhi ashk maula, qirtaas par gire hay
Masuma ki kasam hi, ghazi fakat tere hay
Wo kuch rakam karu mei, jo naa rakam huwa hay
Alfaaz who ataa kar, "Yawar" se jo pare hay
Abbas, Abbas, Abbas (x2)

عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ
بیٹا ہے تو علیؑ کا ، زہرا کی تو دعا ہے
شبیرؑ تیرا آقا ، ام البنینؑ ماں ہے
ہر صورت وچلن میں ، حیدرؑ سے نہ جدا ہے
تا حشر تجھ سے قائم ، دنیا میں بس وفا ہے
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

عباسؑ تجھ سے کتنی ، مانوس تھی سکینہؑ
بابا کے بعد تیرے ، پرچم کو مانا سینہ
معصوم وہ کلی تو ، تجھ سے بچھڑ کے غازیؑ
اِک قیدی مر گئی ہے زندان میں حزینہ
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

شامِ غریباں میں جس ، کا کرتا جل گیا ہے
کانوں سے بالیاں بھی ، ہئے شمر لے گیا ہے
اِس بیکسی سے مولاؑ ، بچی کوئی نہ ترسے
فرشِ عزا پہ رو کر ، ہر دل یہ کہہ رہا ہے
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

تیرے علم کو تھامے ، ہرشخص کہ رہا ہے
مظلوم کربلا کا ، زینبؑ کا واسطہ ہے
پردیسی کوئی ایسا ، پردیس میں نہ اُجڑے
صدقے میں اُس کے جِس کا ، گھر بار لُٹ گیا ہے
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

دل کی مرادیں غازیؑ ، تیرے علم سے پائیں
روتی ہوئی جو مائیں ، تیرے علم پہ آئیں
زہراؑ کے دردِ پہلو کا ، دیتی ہیں واسطہ 
فضہؑ کی کنیزی میں ، اُن کا بھی نام آئے
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

تقدیر کے ستاۓ ، تیرے در پے سر جھکائیں
اشکوں کی التجا ہم ، غازیؑ تجھے سنائیں
بیمارسارباں کے ، زخموں کا واسطہ ہے
جتنے بھی خستہ دل ہیں ، مولا شفا وہ پائیں
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

اُس وقت جب کے زینبؑ ، دربارمیں گئی تھیں
قاری نمازیوں سے ، محفل سجی ہوئی تھی
ظالم یہ پوچھتا تھا ، غازیؑ تیرا کہاں ہے
بالوں سے منہ چھپائے ، زینبؑ یہ کہ رہی تھی 
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

برچھی جگر پہ کھائے، اکبرؑ بھی سو رہے ہیں
تپتی زمیں پہ قاسمؑ کے ٹکڑے بھی چن رہے ہیں
پکڑے کمر کو اپنی، مقتل میں دیکھتے ہیں
تنہا میں رہ گیا ہوں، رو رو کے کہ رہے
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ

جلتے ہو ئے ہیں خیمے، لٹتی ہوئی ردائیں
سہمے ہو ئے ہیں بچے، زینبؑ کسے بلائیں
عباسؑ تم کہاں ہو، عباسؑ تم کہاں ہو
رو رو کہ دل کو تھامے، دیتی ہیں یہ صدائیں
عباسؑ، عباسؑ، عباسؑ