Pardes may ghar lut gaya banoo ki thi faryad aey Syed e Sajjad(a.s.)
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

پردیس میں گھر لٹ گیا بانو کی تھی فریاد
اے سید سجاد
پردیس میں

اصغر کے بنا ہو گئی دنیا میری برباد
اے سید سجاد
پردیس میں

بچوں کی جدائی میں ہے زینب کا برا حال
کبرا ہی ہے بے حال
لیلی کا جگر چھلنی ہے فروہ بھی ہے ناشاد
اے سید سجاد
پردیس میں

اکبر ہیں نہ اصغر ہیں نہ اب شاہ مبیں ہیں
ہر سمت لعین ہیں
تم ہی میرے وارث بھی ہو تم ہی میری اولاد
اے سید سجاد
پردیس میں


راتوں کو بھی اکثر جو سکینہ نہیں سوتی
اٹھ اٹھ کے ہے روتی
آنکھوں میں پھرا کرتے ہیں شاید ستم ایجاد
اے سید سجاد
پردیس میں

پردہ ہیں عماری ہے نہ چادر نہ سرور پر
خشکی ہے لبوں پر
رسی کی گرفت سے کوئی بازو نہیں آزاد
اے سید سجاد
پردیس میں

pardes may ghar lut gaya bano ki thi faryaad
ay sayyade sajjad
pardes may....

asghar ke bina hogayi dunya meri barbaad
ay sayyade sajjad
pardes may....

bachon ki judaai may hai zainab ka bura haal
kubra bhi hai behaal
laila ka jigar chalni hai farwa bhi hai nashaad
ay sayyade sajjad
pardes may....

akbar hai na asghar hai na ab shahe mubeen hai
har samt layeen hai
tumhi mere waris bhi ho tumhi meri aulaad
ay sayyade sajjad
pardes may....

raton ko bhi aksar jo sakina nahi soti
uth uth ke hai roti
aankhon may phira karte ho shayad sitami jaad
ay sayyade sajjad
pardes may....

parde hai amari hai na chadar na saro par
khushki hai labon par
rassi ki ghiraft se koi baazu nahi azaad
ay sayyade sajjad
pardes may....