Aey Zafar e Jin aap bhi aaye thay wahan par
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Aey Zafare jin aap bhi aaye thay wahan par
kya aapne dekha
ashoor ke din lut gaya zehra ka bhara ghar
kya aapne dekha

Zainab ke pisar neemchay haaton pe uthaaye
aur khoon may nahaye
darya ki taraf puhst kiye margaye dilbar
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

qaimay may kahin kya koi masnad bhi bichi thi
dulhan bhi khadi thi
jab kholi gayi laashaye nowshah ki chadar
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

allah re wo saniye hyder ba alamdar
wo sheh ka wafadar
kis tarha ghoday se gira be-dast zameen par
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

suntay hai ke barchi may kaleja nikal aaya
saktay may hai dunya
khenchi hai sina shah ne jo ya ali kehkar
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

baysheer ka khoon lene se inkar kiya hai
jab arz-o-saman ne
tab sheh ne mala chehre pe khoone ali asghar
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

mazloom ke seene pe tha sawaar sitamgar
tha hashr ka manzar
aur khushk galay par tha rawan shimr ka khanjar
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

jab phail gayi charon taraf shame ghariban
mahol tha giryan
bachi koi baba ko sada deti thi rokar
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

bemaar ka bistar ho ke baysheer ka jhoola
sab jal gaya wallah
shahid na tha is zulm ka koi bhi wahan par
kya aapne dekha
Aey zafare jin....

اے زعفرِ جن آپ بھی آئے تھے وہاں پر
کیا آپ نے دیکھا
عاشور کے دن لٹ گیا زہرہ کا بھرا گھر
کیا آپ نے دیکھا

زینب کے پسر نے مجھے ہاتھوں پہ اٹھایا
اور خون میں نہایا
دریا کی طرف پشت کئے مر گئے دلبر
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن

خیمے میں کہیں کوئی مسند بھی بچھی تھی
دلہن بھی کھڑی تھی
جب کھولی گئی لاشائے نوشاں کی چادر
کیا آپ نے دیکھا
اے ظفرے جن
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن

اللہ رے وہ ثانی حیدر بہ علمدار
وہ شہ کا وفادار
کس طرح گھوڑے سے گرا
بے دست زمین پر
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن

سنتے ہے کہ برچھی میں کلیجہ نکل آیا
سکتے میں ہے دنیا
کھینچی ہے سناں شاہ نے جو یاعلی کہہ کر
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن

بشیر کا خون لینے سے انکار کیا ہے
جب عرض و سماں نے
تب شاہ نے ملا چہرے پہ خون علی اصغر
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن

مظلوم کے سینے پہ تھا سوار ستمگر
تھا حشر کا منظر
اور خون خشک گلے پر تھا رواں شمر کا خنجر
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن

جب پھیل گئی چاروں طرف شام غریباں
ماحول تھا گریہ
بچی کوئی بابا کو صدا دیتی تھی رو کر
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن

بیمار کا بستر ہو کہ بشیر کا جھولا
سب جل گیا واللہ
شاید نہ تھا اس ظلم کا کوئی بھی وہاں پر
کیا آپ نے دیکھا
اے زعفرِ جن