Maa ka nala laash tak aata hay Akbar ghar may aao
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

maa ka naala laash tak aata hai akbar ghar may aao
dekh koi yun bhi rulwata hai akbar ghar may aao
haaye akbar ghar may aao

aakhri dedaar mumkin ho to dikhlado mujhe
laash uthane ran may baap aata hai akbar ghar may aao
haaye akbar ghar may aao

tukde tukde hogaya nazuk kaleja waqte jab
is tarha barchi koi khata hai akbar ghar may aao
haaye akbar ghar may aao

sadqe jaungi wafa ehde jawani ne na kuch
itne jaldi koi mar jaata hai akbar ghar may aao
haaye akbar ghar may aao

tum yahan maqtal may ho aur maa hai deowri par tapa
meri jaan ulfat may farq aata hai a akbar ghar may aao
haaye akbar ghar may aao

tumse milna kya tumhari maa ke kismat may nahi
dil mera kaahe ko ghabrata hai akbar ghar may aao
haaye akbar ghar may aao

qaime ke dar par tumhare waaste roti hai maa
aise koi maa ko rulwata hai akbar ghar may aao
haaye akbar ghar may aao

ماں کا نالہ لاش تک آتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ماں کوئی یوں بھی رلواتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ہائے اکبرؑ گھر میں آؤ

آخری دیدار ممکن ہو تو دکھلا دو مجھے
لاش اٹھائے رن میں باپ آتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ہائے اکبرؑ گھر میں آؤ

ٹکڑے ٹکڑے ہو گیا نازک کلیجہ وقت جب
اس طرح برچھی کوئی کھاتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ہائے اکبرؑ گھر میں آؤ

صدقے جائوں گی وفا عہد جوانی نے نہ کی
اتنی جلدی کوئی مر جاتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ہائے اکبرؑ گھر میں آؤ

تم یہاں مقتل میں ہو اور ماں ہے ڈیوڑھی پر تپاں
میرے جان الفت میں فرق آتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ہائے اکبرؑ گھر میں آؤ

تم سے ملنا کیا تمہاری ماں کی قسمت میں نہیں
دل میں کاہے کو گھبراتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ہائے اکبرؑ گھر میں آؤ

خیمے کے در پر تمہارے واسطے روتی ہے ماں
ایسے کوئی ماں کو رلواتا ہے اکبرؑ گھر میں آؤ
ہائے اکبرؑ گھر میں آؤ