Nana teray Hasnain hain ham gham e madar sunanay aaye hain
Efforts: Ali Rizvi (Wah Cantt)



نانا تیرے حسنینؑ ہیں ہم غمِ مادر سنانے آئے ہیں
تیری تربت پہ لاڈلے تیرے چند ٹکڑے سند کے لائے ہیں

انما روز جس پہ پڑھتے تھے اب وہ دروازہ جل گیا نانا
تیرے در پہ دیا جلانے ہم اسی در کو بجھا کے آئے ہیں

داغ دروں کے کیسے دکھلاتی باپ ہو تم سے بیٹی کیا کہتی
جس کساء کے تلے تھے ہم سارے نیل اُسکے تلے چھپائے ہیں

دل پہ آئی تھی موت کی ضربت سر کے بالوں پہ آ گئی غربت
جب یہ کہتے تھے لوگ زھراؑ نے دین کے مسئلے بھلائے ہیں

مشکلوں سے قدم اٹھاتی ہے دو قدم چل کے بیٹھ جاتی ہے
بِن سہارے وہ چل نہیں سکتی زخم ایسے جگر پہ کھائے ہیں

بولے اکبرؑ یہ رو کے شہزادے صرف تحریر ہی نہیں تھی وہ
بضعۃ منی کے وہ ٹکڑے تھے جو ہوا میں  گئے اڑائے ہیں

Nana(sawaw) tere Hasnain(as) hain hum 
Gham-e-madar sunane aaye hain
Teri turbat pe ladle tere
Chand tukre sanad ke laye hain

Innama rooz jiss pe parhte thay 
Ab wo darwaza jal gaya Nana(sawaw)
Tere dar pe diya jalane hum
Ossi dar ko bhuja ke aaye hain

Daagh duroon ke kaise dikhlati
Baap ho tum se beti kiya kehti
Jiss kissa ke taley thay hum sare 
Neil us ke talay chupaye hain

Dil pe aayi thi moat ki zarbat 
Sar ke baloon tak aa gayi gurbat
Jab ye kehte thay log Zahra(as) 
Ne Dein Ke Maslay Bhulaye Hain

Mushkilon se qadam uthati hay
Do qadam chal ke baith jati hay
Bin sahare wo chal nahi sakti 
Zakhm aise jigar peh khaye hain

Hath uthta nahi hai pehlo Se
Haye Mohsin(as) ke bain uthtay hain
Maa Ka cachna mohaal hai Nana(sawaw) 
Ab yateemi ke sar pe saaye hain

Boli "Akbar" yeh ro ke Shehzaday 
Sirf trehreer hi nahi thi wo
Bizat-o-minni ke wo tukre thay
Jo hawa mein gaye uraye hain