Aa ja meray bachay meri aaghosh may aa ja
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Ashur ka suraj hay, kayamat ki ghari hay
bhaye ka, galaa kat-ta, bahan dekh rahi hay
maqtal me kisi maa ki, sadaa goonj rahi hay
Aa aey mere Hussain meri goad may aa jaa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa ja
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa ja (x2)

1) Mere liye ay laal tu Asghar ki tarha he
godi meri gehwaara hay bistar ki tarha hai
is dhoop may daman mera chadar ki tarha hai
Aa aey mere Hussain meri goad may aa jaa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa jaa (x3)

2) May maa hu mera dil, nahi seenay may sambhalta
nazuk ye badan tera ye jalta huwa sehra
aur is may sitam ye, na ke tu rehgaya pyaasa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa jaa (x3)

3) May goad may layloon, tujhe sinay se lagaa loon
sinay pe Sakina ki tarha tujko sulaa loon
sinay ke tere tir may palko se nikalu
Aa aey mere Hussain meri goad may aa jaa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa jaa (x3)

4) Aakar mere zanu pe jo so jaa te thay beta
chakki ki mushakkat ke bhi pehlu, nahi badlaa
ab kese tujhe chor du maqtal may akela
Aa aey mere Hussain meri goad may aa jaa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa jaa (x3)

5) Teri bhi to awlad he tu bhi to padar hai
awlad ka gham kya hai yeh tujko bi khabar hai
hham bachche ka sehjaye ye kis maa ka jigar he
Aa aey mere Hussain meri goad may aa jaa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa jaa (x3)

6) Tu lait gaya thak ke tu isi jalti zamin par
ye kiska lahu tu nay malaa ruhe hasi par
mat khakh pe so lal teri maa hai yaheen par
Aa aey mere Hussain meri goad may aa jaa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa jaa (x3)

7) Jo dil pe tere guzri may sub dekh-e rahi thi
har lash uthane may teray sath gayi thi
ab baat wo kehti tujo bachpan may kahi thi
Aa aey mere Hussain meri goad may aa jaa
Aa ja, mere bache, meri aaghosh may aa jaa (x3)

عاشورِ کا سورج ہے، قیامت کی گھڑی ہے
بھائی کا، گلا کٹتا، بہن دیکھ رہی ہے
مقتل میں کسی ماں کی، صدا گونج رہی ہے
آ اے میرے حیسنؑ میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا

میرے لئے اے لال تو اصغرؑ کی طرح ہے
گودی میری گہوارا ہے بستر کی طرح ہے
اس دھوپ میں دامن میرا چادر کی طرح ہے
آ اے میرے حیسنؑ میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا

میں ماں ہوں میرا دل نہیں سینے میں سنبھلتا
نازک یہ بدن تیرا یہ جلتا ہوا صحرا
اور اس میں ستم یہ ہے کہ تو رہ گیا پیاسا
آ اے میرے حیسنؑ میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا

میں گود میں لے لوں تجھے سینے سے لگا لوں
سینے پہ سکینہؑ کی طرح تجھ کو سُلا لوں
سینے کے تیرے تیر میں پلکوں سے نکالوں
آ اے میرے حیسنؑ میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا

آکر میرے زانو پہ جو سو جاتے تھے بیٹا
چکی کی مشقت سے بھی پہلو نہیں بدلا
اب کیسے تجھے چھوڑ دوں مقتل میں اکیلا
آ اے میرے حیسن میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا

تیری بھی تو اولاد ہے تو بھی تو پدر ہے
اولاد کا غم کیا ہے یہ تجھ کو بھی خبر ہے
غم بچے کا سہہ جائے یہ کس ماں کا جگر ہے
آ اے میرے حیسن میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا

کیوں لیٹ گیا تھک کے تو اِس جلتی زمین پر
یہ کس کا لہو تو نے مَلا رُوئے حَسِیں پر
مت خاک پہ سو لال تیری ماں ہے یہیں پر
آ اے میرے حیسن میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا

جو دل پہ تیرے گزری میں سب دیکھ رہی تھی
ہر لاش اٹھانے میں تیرے ساتھ گئی تھی
اب بات وہ کہتی ہوں جو بچپن میں کہتی تھی
آ اے میرے حیسن میری گود میں آجا
آجا میرے بچے، میری آغوش میں آجا