Haey Sakina mar gayi
Efforts: Ajani Abbasali



Sakina (sa) Mar Gayi .....(x2)
Haay ..... Sakina (sa) Mar Gaye,

Zindan me jab yeh shor utha,
Alam se dard tha us dam har ek ka chehra
Qareeb e lasha e hamsheer bhai jab pohoncha
Bandhe thay hath badan zouf se larazta tha
Na uth saka jo janaza bahan ka bhai se
To ro ke bete se Sajjad(as) phir yeh kehne lagay

Kar madad meri Baqir(as) beta hamsheer ki qabar banaoon may (x2)
Zanjeer uthao tum meri (x2) Aur uski lash uthaoon may
Kar madad meri Baqir(as) beta, hamsheer ki qabar banaoon may

Dada ne badi mazloomi may Shehzadi(sa) ko dafnaya
Lekin woh Madina tha Baqir(as), aur yeh hay des paraya
Is char baras ki mazlooma ko gurbat me kahan dafnau may
Kar madad meri Baqir(as) beta, hamsheer ki qabar banaoon may

Mil jaye agar wapas mujhko, woh teri rida ya gohar
Baba ki lahad par rakh doon ya, Sughra ko doon wapas jaakar
Woh dono amanat hai teri, batla de kisay pohuchaoon may
Kar madad meri Baqir(as) beta, hamsheer ki qabar banaoon may

Jub tum ko rehai mil jaye, phupion ko watan pohuchana
Reh lenge yahin hum bhai bahan, tum qafela ghar lejana
Dafnate huay is bacchi ko,  zindan may agar mar jaoon may
Kar madad meri Baqir(as) beta, hamsheer ki qabar banaoon may

Dono ko juda main kaise karoon, himmat hi nahi yeh meri
Hai aap ke sar se lipti hui, bejaan yeh aap ki beti
Kya sath Sakina ke baba, sar aap ka bhi dafnaoon may
Kar madad meri Baqir(as) beta, hamsheer ki qabar banaoon may

Tareek lahad ko band kia, Abid ne ye keh kar Akbar
Keh do ye haram se aey Baqir, sub royen yahan par aakar
Turbat pe  chirrakne ki khatir, ab pani kahan se laoon may
Kar madad meri Baqir(as) beta, hamsheer ki qabar banaoon may

سكینہؑ مر گئی
ہائے سكینہؑ مر گئی

زندان میں جب یہ شور اٹھا
الم سے درد تھا اُس دم ہر اک کا چہرہ
قریب لاشہءِ ہمشیر بھائی جب پہنچا
بندھے تھے ہاتھ بدن ضعف سے لرزتا تھا
نہ اٹھ سکا جو جنازہ بہن کا بھائی سے 
تو رو كے بیٹے سے سجادؑ پِھر یہ کہنے لگے 

کر مدد میری باقرؑ بیٹا ہمشیر کی قبر بناؤں میں
زنجیر اٹھاؤ تم میری ، اور اُسکی لاش اٹھاؤں میں
کر مدد میری باقرؑ بیٹا ، ہمشیر کی قبر بناؤں میں

دادا نے بڑی مظلومی سے ، تھا دادی کو دفنایا 
لیکن وہ مدینہ تھا باقرؑ ، اور یہ ہے دیس پرایا 
اِس چار برس کی بچی کو ، غربت میں کہاں دفناؤں میں
کر مدد میری باقرؑ بیٹا ، ہمشیر کی قبر بناؤں میں

مل جائے اگر واپس مجھکو ، وہ تیری ردا یا گوہر 
بابا کی لحد پر رکھ دوں یا ، صغراؑ کو دوں واپس جا کر 
وہ دونوں امانت ہیں تیری ، بتلا دے کسے پہنچاؤں میں
کر مدد میری باقرؑ بیٹا ، ہمشیر کی قبر بناؤں میں

جب تم کو رہائی مل جائے ، پھپھیوں کو وطن پہنچانا 
رہ لینگے یہیں ہم بھائی بہن ، تم قافلہ گھر لے جانا 
دفناتے ہوئے اِس کو ، زندان میں اگر مر جاؤں میں
کر مدد میری باقرؑ بیٹا ، ہمشیر کی قبر بناؤں میں

دونوں کو جدا میں کیسے کروں ، ہمت ہی نہیں یہ میری 
ہے آپ كے سَر سے لپٹی ہوئی ، بے جان یہ آپ کی بیٹی 
کیا ساتھ سكینہ كے بابا ، سَر آپ کا بھی دفناؤں میں
کر مدد میری باقرؑ بیٹا ، ہمشیر کی قبر بناؤں میں

تاریک لحد کو بند کیا ، عابدؑ نے یہ کہہ کر اکبر 
کہہ دو یہ حرم سے اے باقرؑ ، سب روئیں یہاں پر آکر 
تربت پہ چھڑکنے کی خاطر ، اب پانی کہاں سے لاؤں میں 
کر مدد میری باقرؑ بیٹا ، ہمشیر کی قبر بناؤں میں