Baraey dil e dukhtar
Efforts: Ajani Abbasali



Haaye..... 
Haaye Hussaina (as) haaye Hussaina (as),
Aye haaye Sakina (as) aye haaye Sakina (as)...

Yeh ruksat-e-aakhir hai pukaare Shahe waaala,
Aye Zainab (as) -o-Kulsum (as)  Rabab (as)  aur Ruqayya (as),
Tum sab pe salaam aakhri Allah (s.w.t.) ko saumpaa,
Lipti hui kadmo se yeh kehti thi Sakina (s.a.).

Aye Kul ke madadgaar madad karne ko aao,
Yaa Fatema Zehra (s.a.) mere baba ko bachaao x2


Baba na kaho baba, tum saath raho baba,
Kuch humse suno baba, Aage na badho baba,
Aaram karo baba, Baraaye yeh dile Dukhtar,
Baraaye yeh dile Dukhtar, Khaime mein chalo baba.

Aye Kul ke madadgaar .....


Main jaan gayi baba, Pehchaan gayi baba,
Kurbaan gayi baba, talwaron mein jaaoge,
Phir tum bhi naa aaoge, Baraaye yeh dile Dukhtar,
Baraaye yeh dile Dukhtar, Tum humko na tadpaana.

Aye Kul ke madadgaar .....

Baba aye mere baba, laazim hai agar jaana,
Yeh humse karo waada, jab shab ka ho sannaata,
Aur meri sada sunna, Baraaye yeh dile Dukhtar,
Baraaye yeh dile Dukhtar, Tum laut ke aa jana.

Aye Kul ke madadgaar .....


Sheh bole Sakina (s.a.) jaan, sau jaan se main kurbaan,
Iss tarah na ho girya, ek waada nibhaana hai,
ek qarz puraana hai, Baraaye yeh dile Dukhtar,
Baraaye yeh dile Baba, Tum aaj dua karna.

Aye Kul ke madadgaar .....

Pursa hai paey Maula (aS), Rehan-O-Ali jee ka
Karte the haram Nauha, Sarwar ne kaha beti,
Saaat hai judaai ki, Baraaye yeh dile Dukhtar
Baraaye yeh dile Baba, Maqtal na chali aana

ہاۓ حسینا واۓ حسینا
اے واۓ سکینہ اے واۓ سکینہ
یہ رخصت آخر ہے پکارے شہہ والا
اے زینبؑ و کلثومؑ، ربابؑ اور رقیہؑ
تم سب پہ سلام آخری اللہ کو سونپا
لپٹی ہوئی قدموں سے یہ کہتی تھی سکینہ

اے کل کے مددگار ‘ مدد کرنے کو آؤ
یا فاطمہ زہراؑ میرے بابا کو بچاؤ

بابا نہ کہو بابا
تم ساتھ رہو بابا
کچھ ہم سے سنو بابا
آگے نہ بڑھو بابا
آرام کرو بابا
براۓ دل دختر
خیمے میں چلو بابا

اے کل کے مددگار ‘ مدد کرنے کو آؤ
یا فاطمہ زہراؑ میرے بابا کو بچاؤ

میں جان گئ بابا
پہچان گئ بابا
قربان گئ بابا
تلواروں میں جاؤ گے
پھر تم بھی نہ آؤ گے
براۓ دل دختر
تم ہم کو نہ تڑپانا

اے کل کے مددگار ‘ مدد کرنے کو آؤ
یا فاطمہ زہراؑ میرے بابا کو بچاؤ

بابا یہ میرے بابا
لازم ہے اگر جانا
یہ ہم سے کرو وعدہ
جب شب کا ہو سناٹا
اور میری صدا سننا
براۓ دل دختر
تم لوٹ کے آجانا

اے کل کے مددگار ‘ مدد کرنے کو آؤ
یا فاطمہ زہراؑ میرے بابا کو بچاؤ

شہہ بولے سکینہ جب
سو جان سے میں قرباں
اس طرح نہ ہو گریاں
اک وعدہ نبھانا ہے
اک قرض پرانا ہے
براۓ دل دختر
براۓ دل بابا
تم آج دعا کرنا

اے کل کے مددگار ‘ مدد کرنے کو آؤ
یا فاطمہ زہراؑ میرے بابا کو بچاؤ

پرسہ ہے پئہ مولا
ریحان و علی جی کا
کرتے تھے حرم نوحہ
سرور نے کہا بیٹی
ساعت ہے جدائی کی
براۓ دل دختر
براۓ دل بابا
مقتل نہ چلی آنا

اے کل کے مددگار ‘ مدد کرنے کو آؤ
یا فاطمہ زہراؑ میرے بابا کو بچاؤ